افغانستان پر چین مخالف اتحاد کواڈ کا سربراہ اجلاس بلالیا گیا

شیئر کریں:

خطے کی بدلتی صورت حال باالخصوص افغانستان سے امریکا کی فوج کے چلے جانے کے بعد کیا تبدیلیاں
متوقع ہیں اس پر دنیا کی بڑی معیشتوں کے گروپ “کواڈ” کا اجلاس طلب کر لیا گیا ہے۔ امریکا کی
سربراہی میں بننے والے اس چارملکی اتحاد میں آسٹریلیا، بھارت اور جاپان شامل ہیں۔

چار ملکوں کا سربراہ اجلاس 24 سمتبمر کو واشنگٹن میں ہو گا۔ جوبائیڈن کی سربراہی میں ہونے والے
اس اجلاس میں آسٹریلوی وزیراعظم اسکاٹ مارس، جاپان کے وزیراعظم یوشی سوگا اور بھارتی وزیر اعظم
نریندرا مودی شرکت کریں گے۔

رواں سال مارچ میں چاروں رہنماؤں کا ورچول اجلاس ہوا تھا لیکن اب اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے موقع
پر رہنما سرجوڑ کر بیٹھیں گے۔ بظاہر اس اجلاس کا مین ایجنڈا کورونا وائرس سے بچاؤ کے لیے ویکسین کی
فراہمی ہو گا لیکن افغانستان میں بڑی تبدیلی اور طالبان کا دوبارہ سے اقتدار میں آنا اور اس کے خطے کے
ممالک پر کیا اثرات مرتب ہو سکتے ہیں اس پر غور کیا جائے گا۔

افغانستان کی سرزمین سے 20 سال بعد امریکا کی فوج کے نکلنے سے سب سے زیادہ پریشانی بھارت کو ہورہی
ہے کیونکہ دو دہائی کے دوران بھارت نے افغان ایجنسی اور شمالی اتحاد کو پاکستان کے خلاف کرنے کے لیے بڑی
سرمایہ کاری کی تھی۔ اب طالبان کے اقتدار میں آنے کےبعد اس کے مفادات کو نقصان پہنچنے کا خدشہ ہے۔

ویسے بھی اس چار ملکی اتحاد کو چین کے خلاف تصور کیا جاتا ہے چین کے میگا ون بیلٹ روڈ منصوبے
کے مقابلے میں کواڈ نے بھی اس سے کئی گنا بڑے منصوبے اعلان کر رکھا ہے لیکن چین کے منصوبہ پر کام
کافی آگے نکل چکا ہے جبکہ کواڈ منصوبہ محض کاغذات تک ہی محدود ہے۔


شیئر کریں: