بھارت کو جاسوسی کا جواب جاسوسی سے دینے کا فیصلہ

شیئر کریں:

بھارت کی جانب سے وزیراعظم عمران خان سمیت کابینہ ارکان کے فون ہیک کیے جانے کے انکشاف پر
پاکستان میں تشویش پائی جاتی ہے۔ پاکستان نے بھی بھارت کو جواب دینے کی تیاری کر لی ہے۔ بھارت
اسرائیلی کمپنی کے سافٹ ویئر ‘پیگاسس ‘ کے ذریعے وزیراعظم عمران خان سمیت کابینہ ارکان کی
فون کالز اور میسجز ریکارڈ کرنے کی کوشش کرتا رہا ہے۔

ذرائع کے مطابق بھارت کی جاسوسی پر اعلٰی عسکری اور سول قیادت کی بیٹھک ہوئی جس میں وزراء
سمیت سرکاری افسران کے لیے واٹس ایپ طرز کی نئی ایپلی کیشن لانے پر مشاورت کی گئی۔

حکومت نے بتایا کہ لائحہ عمل طے کر رہے ہیں اور بھارت کو بھرپور جواب دیا جائے گا۔
امریکی اخبار نے جاسوسی کے اسرائیلی نظام سے پاکستان سمیت کئی ملکوں کی شخصیات کے فون ہیک
کیے جانے کا انکشاف کیا تھا۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل اور فرانسیسی میڈیا گروپ کی مشترکہ تحقیقاتی رپورٹ کے مطابق بھارت سمیت
10 ممالک اسرائیلی کمپنی کے صارف ہیں جو اس کے سافٹ ویئر اپنے مخالفین کی جاسوسی کے لیے
استعمال کرتے ہیں۔

چند سالوں کے دوران 50 ہزار سے زائد افراد کا فون ہیک کیا گیا یا پھر کوشش کی گئی۔ ان افراد میں
صحافی، انسانی حقوق کے کارکن اور اپوزیشن رہنما بھی شامل ہیں ۔

بھارتی حکومت کے پاس جاسوسی، نگرانی اور ڈی کوڈ کرنے کی صلاحیت ہے۔ اس نے راہول گاندھی سمیت
وزیراعظم عمران خان کا پرانا نمبر بھی ہیک کرنے کی کوشش کی۔
ایمنسٹی انٹرنیشنل نے اسرائیلی کمپنی کے خلاف مقدمے کی حمایت کی ہے۔
دوسری جانب وفاقی وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی (آئی ٹی) میں ہیکنگ اور ڈیٹا لیکیج سے محفوظ ایپلی
کیشن کی تیاری پر اہم پیش رفت ہوئی ہے۔

وفاقی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی امین الحق نے بتایا ہے کہ وزارت انفارمیشن سرکاری امور کی انجام
دہی کیلئے ایپ تیارکرنے کے قریب ہے۔ سرکاری ایپ کا نام ’بیپ‘ ہوگا جس میں ٹیکسٹ اور آڈیو
کال ہوسکے گی۔

ڈیٹا محفوظ تر بنانے کیلئے جدید ترین بلاک چین ٹیکنالوجی کا استعمال کیا گیا ہے۔


شیئر کریں: