ڈرون کے ذریعے قرنطینہ میں سگریٹ منگوانے پر 1300 ڈالر کا جرمانہ

شیئر کریں:

سگریٹ نوشی انسانی زندگی کے لیے انتہائی مہلک قرار دی گئی ہے یہ صحت کے ساتھ ساتھ جیب پر بھی
گراں گزرتی ہے۔ سگریٹ کے عادی افراد کو اگر وقت پر نہ ملے تو ان کی حالت غیر ہوجایا کرتی ہے اور
وہ ایک سگریٹ کے لیے قوانین کو توڑنے سے بھی باز نہیں آتے۔

ایک ایسا ہی واقعہ آسٹریلیا کے سیاحتی مرکز براڈ بیچ کے کراؤن پلازہ ہوٹؒل میں دیکھنے کو ملا جہاں ایک
خاتون سیاہ کووڈ 19 کی وجہ سے قرنطینہ کیے ہوئی تھی۔ سگریٹ ختم ہونے پر اس نے باہر آڈر کیا اور پھر
ڈرون کے ذریعے ہوٹؒل کے کمرہ کی بالکنی میں اسے سگریٹ فراہم کی گئی۔

اسپتال انڈسٹری انسانیت کی خدمت کے بجائے تکلیف کا سبب گئی

ڈرون کے ذریعے سگریٹ کی ڈیلوری ہوٹل کے کیمرہ میں ریکارڈ ہو گئی جس پر قوائد و ضوابط کی خلاف
ورزی پر ہوٹل انتظامیہ نے پولیس کا اطلاع دی۔ خاتون نے سگریٹ منگوانے کا اعتراف کرلیا۔ پولیس نے
خاتون پر ایک ہزار 300 ڈالر کا جرمانہ کیا۔ اسی طرح ڈرون آپریٹ کرنے والے پر جرمانے کیا جائے گا۔

خیال رہے دوران قرنطینہ ہوٹل میں قیام کرنے والے سیاح ہوٹل کے باہر سے کھانے پینے کی اشیا آڈر کر سکتے
ہیں لیکن سگریٹ منگوانے پر پابندی ہے۔


شیئر کریں: