بہاولنگر کے سرکاری اسکولوں میں مفت کتابیں بھی فروخت کیے جانے لگیں

شیئر کریں:

بہاولنگر سے سمیع بخاری
بہاولنگر کے سرکاری اسکولز میں ایجوکیشن ریفارمز پروگرام حکومت پنجاب کی جانب سے مہیاء کردہ
تدریسی کتب فروخت ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔

کتابوں کی عدم دستیابی کا بہانہ بنا کر مبینہ طور پر طلباء کو 500 روپے فی سیٹ کے حساب سے ناٹ فار سیل
کتابیں دی جانے لگی ہیں۔ نئے تعلیمی سال شروع ہونے سے قبل ہی متعدد سرکاری اسکولز کو کتابوں کی
کمی کا سامنا ہے۔

ایسا بتایا گیا تھا اسکولز انتظامیہ کی جانب سے جبکہ نئے سیشن میں کتابوں کی تقسیم کے لیے مختلف
تحصیلوں میں گودام بھی بنائے گئے ہیں تاہم محکمہ تعلیم کے ذمہ داران کا کہنا تھا کہ ان گوداموں میں طلبہ
کے لیے رکھی گئی کتابیں ختم ہو چکی ہیں۔

کتابوں کی کمی کے باعث طلباء کو شدید مشکلات کا سامنا ہے دوسری جانب بہاولنگر کے سرکاری اسکولز
میں ایجوکیشن ریفارمز پروگرام حکومت پنجاب کی جانب سے مہیاء کردہ تدریسی کتب فروخت ہونے
کا انکشاف ہوا ہے۔

والدین کا کہنا ہے کہ بچوں کو 500 روپے فی کس کے حساب سے ناٹ فار سیل بکس دی جارہی ہیں اور یہ
رقم اسکول ٹیچرز خود وصول کر رہے ہیں۔
والدین نے وزیراعلی پنجاب سردار عثمان بزدار اور وزیر تعلیم پنجاب ڈاکٹر مراد راس سے مطالبہ کیا ہے کہ حکومت کی جانب سے مفت مہیاء کی جانے والی کتابوں کی فروخت کرنے والوں کے خلاف سخت سے سخت اور فی الفور کارروائی کی جائے۔


شیئر کریں: