پنجاب میں کورونا کے نازک ترین مریضوں کی تعداد 33 فیصد رہ گئی

شیئر کریں:

عامر حسینی رپورٹر جنوبی پنجاب

پنجاب بھر میں کورونا کے وینٹی لیٹرز پہ مریضوں کی شرح 35 فیصد سے کم ہوکر تینتیس فیصد ہوگئی ہے۔ اس طرح اب پنجاب میں کل وینٹی لیٹرز کی دستیابی کی سوفیصد شرح کے مقابلے میں صرورت 33 فیصد ہوگئی ہے۔

پنجاب بھر کے سرکاری و نجی اسپتالوں میں اس وقت 1019 وینٹی لیٹر ہیں جن مں سے کل 372 پہ کورونا کے شکار مریض ہیں اور اس وقت 647 وینٹی لیٹر خالی ہیں۔

پنجاب بھر کے اسپتالوں کے کورونا وارڈز میں مریضوں کے لیے بیڈ کی دستیابی میں بھی بہتری آئی ہے اور جہاں پہ گزشتہ ماہ بستروں کی کمی کا سامنا تھا وہاں شرح اب30 فیصد کم ہوگئی ہے۔

پنجاب بھر میں کورونا کے مریضوں کے لیے ہسپتالوں میں قائم ایچ ڈی اوز میں 4046 بستروں میں سے 1211 پہ مریض ہیں۔
حکام کے مطابق پنجاب بھر میں وینٹی لیٹر پہ منتقل 35 کورونا کا شکار مریض انتقال کرگئے۔ پنجاب میں کورونا سے ہلاک ہونے والوں کی تعداد 9739 پہ پہنچ گئی ہے۔ آخری 24 گھنٹوں مں 1057 لوگوں کا کورونا ٹسٹ مثبت آیا ہے۔ پنجاب میں گزشتہ 24 گھنٹوں میں کورونا کے مرض کی شرح 5 فیصد رہی ہے۔
اپریل سے مئی کے پہلے ہفتے تک پنجاب بھر کے کورونا وارڈز میں دستیاب وینٹی لیٹرز پہ سو فیصد کورونا کے مریض ہوگئے تھے اور اس بات کا خطرہ بڑھ گیا تھا کہ وینٹی لیٹر دستیاب نہ ہونے سے کورونا کے شکار نازک ترین مریض موت کے منہ میں چلے جائیں گے۔ لیکن حکومت کے پنجاب بھر میں مکمل ناک ڈاؤن اور ایس او پیز پہ سختی سے عمل درآمد نے سر پہ منڈھلاتے بحران کو ٹال دیا۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اسپتالوں میں کورونا کے مریضوں کی تعداد میں کمی آنے سے ہسپتالوں میں آکسجین کی فراہمی کے حوالے سے پڑنے والا دباؤ بھی کم ہوگیا ہے اور اب ہسپتالوں میں آکسجین سلنڈر کی بھی وافر مقدار موجود ہے۔

ملتان اور خانیوال سمیت کئی شہروں میں کورونا مرض کی شرح تاحال 5 فیصد سے کہیں اوپر دیکھی جارہی ہے۔ خانیوال میں 21 اور 22 مئی کو کویڈ -19 پازیٹو ٹیسٹ کی شرح نو فیصد رہی- 21 مئی کو 200 اور 22 مئی کو205 ٹیٹس کیے گئے جن میں 21 مئی کو 20 اور 22 مئی کو 25 میں کورونا وآئرس پایا گیا۔

ڈپٹی کمشنر خانیوال آغا ظہیر عباس شیرازی نے بتایا کہ خانیوال ضلع میں پہلے چاروں تحصیلوں میں 8 مراکز برائے اینٹی کویڈ-19 ویکسینشن کام کررہے تھے اور اب تمام بنیادی مراکز صحت میں بھی ویکسینش سنٹرز کا قیام کردیا گیا اور سوموار سے وہاں پہ بھی ویکسینشن لگانے کا آغاز کردیا جائے گا۔


شیئر کریں: