کورونا کی ایس او پیز پر فوج پابندی کروائے گی، بھارت جیسی صورت حال کا خدشہ

شیئر کریں:

کورونا کے بڑھتے ہوئے خطرے کے پیش نظر ایس او پیز پر عملدرآمد کے لئے فوج سے مدد لینے کا فیصلہ کرلیا
گیا۔ فوج سڑکوں پر ایس او پیز پر عملدرآمد کے لئے پولیس کی مدد کرے گی اس بات کا اعلان وزیراعظم
عمران خان نے این سی سی کے اجلاس کے بعد بریفنگ دیتے ہوئے کیا۔

لاک ڈاؤن کیاتو معیشت بیٹھ جائے گی ویکسین کے حصول کےلیے کوشش کر رہے ہیں۔ ماسک اور ایس اوپیز
پر عمل کے لیے پولیس اور فوج کی مدد لی جائے گی۔ پہلے صورت حال اور اب کی صورتحال میں بہت فرق ہے۔
ماسک لگانے سے آدھا مسئلہ حل ہوجاتا ہے حالات قابو سے نکل گئے تو سخت فیصلے کرنے پڑیں گے بھارت
جیسے حالات ہوگئے تو شہر بند کرنا پڑیں گے ہم نے بہترین حکمت عملی سے کوروناپرقابو پایاتھا۔

وفاقی وزیر اسد عمر کا کہنا ہے کہ خدشہ ہے ایسی صورتحال پیدا ہو جائےکہ شہر میں لاک ڈاؤن کرنا پڑے۔
تمام بازار شام چھ بجے تک کھلے ہوں گےشام 6 بجے کے بعد اشیائے ضروریہ کی دکانیں کھلیں گی۔ ان ڈور
ڈائننگ پر پابندی تھی آؤٹ ڈور پر بھی پابندی لگائی جارہی ہے۔ آفس ٹائمنگ 2 بجے تک کی جارہی ہے۔

جن شہروں میں کورونا کیسززیادہ ہوں گے وہاں 9ویں سے12ویں جماعت کی کلاسز عید تک بند کردی
جائیں گی۔ تمام وہ اضلاع جہاں 5 فیصد سے زیادہ مثبت کیسز ہیں وہاں اسکول بند ہوں گے50 فیصد ورک
فرام ہوم کی پالیسی پر زور دیا جا رہا ہے۔

دفتر میں 50 فیصد سے زیادہ لوگوں کو نہ بلایا جائےلاک ڈاؤن کے حوالے سے صوبوں سے مل کر پلان بنائیں گے۔
عید تک آؤٹ ڈور ڈائننگ پر بھی پابندی لگائی جارہی ہے۔

ڈاکٹرز نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ اگر صورت حال پر قابو نہ پایا گیا تو بھارت جیسے حالات کا سامنا کرنا
پڑ سکتا ہے۔


شیئر کریں: