لاہور کا یتیم خانہ چوک میدان جنگ، پولیس اور رینجرز اہل کار اغوا

شیئر کریں:

تحریک لبیک پاکستان کو کالعدم قرار دیے جانے کے بعد تین روز میدان لاہور کا یتیم خانہ چوک میدان جنگ
بن گیا۔ پرتشدد مظاہروں اور پولیس پر حملوں میں کئی افراد ہلاک اور زخمی ہو چکے ہیں۔

پنجاب پولیس کے ترجمان کا کہنا ہے کہ کالعدم تنظیم تحریک لبیک پاکستان کے کارکنوں نے کئی پولیس
اہل کاروں اور رینجرز کے دو اہل کار یرغمال بنائے ہوئے ہیں۔ لاہور میں یتیم خانہ چوک ملتان روڈ پر
ٹی ایل پی کے کارکن ایک ہفتہ سے دھرنا دیے بیٹھے لیکن اتوار کی صبح حالات خراب ہو گئے۔

کالعدم تنظیم نے دعوی کیا ہے کہ اس کے دو کارکن پولیس تشدد سے ہلاک اور متعدد زخمی ہوئے ہیں۔ متعدد
کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

تحریک لبیک نے فرانس کے سفیر کی پاکستان سے بے دخل کیے جانے تک احتجاجی تحریک اور لاشوں کو
اسلام آپاد کے آب پارہ چوک پر لے جانے کا اعلان کر دیا ہے۔

خیال رہے حکومت نے تحریک لبیک پاکستان کو 15 اپریل کو کالعدم قرار دیا تھا۔ اس سے پہلے تحریک
کے سربراہ سعد رضوی کی گرفتاری پر ملک بھر میں دھرنے دیے گئے تھے۔ مظاہرین نے پولیس اہلکاروں اور
املاک پر حملے کیے جس میں کم از کم 3 پولیس اہل کار شہید اور 400 سے زائد زخمی ہوئے تھے۔


شیئر کریں: