دنیا کی بدلتی سیاست میں روسی وزیر خارجہ کا اہم دورہ پاکستان

شیئر کریں:

روس کے وزیر خارجہ سرگئی لاروف کے دو روزہ دورہ پاکستان نے بھارت کی پریشانیاں بڑھا دی ہیں۔ پاکستان اور
روس تعلقات اہم تاریخی موڑ پر پہنچ گئے ہیں۔ پاکستان روس دونوں ملک شنگھائی کوآپریشن آرگنائزیشن
کے ممبر بھی ہیں۔
9سال بعد کسی بھی روسی وزیر خارجہ کی جانب سے پاکستان کا یہ پہلا دورہ ہے۔ موجودہ صورت حال میں
ان کا یہ اہم دورہ علاقائی اور عالمی توجہ کا مرکز بنا ہوا ہے۔

روس کا پاکستان کو کورونا ویکسین دینے کا اعلان

دونوں ممالک کے مابین دِفاع اور انرجی سمیت مختلف شعبوں میں تعاون سے متعلق اہم پیش رَفت ہوئی ہے۔
روسی وزیر خارجہ نے جی ایچ کیو میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باوجوہ کے ساتھ اہم ملاقات کی۔
خطے میں امن و امان کی صورت حال، افغان تنازعہ کا پُرامن حل اور باہمی دفاعی تعاون بڑھانے پر گفتگو ہوئی۔
پاکستان اور روس کے درمیان زبردست دفاعی تعاون کئی سالوں سے جاری ہے۔ دونوں ممالک کے درمیان ”درُزبا“
نامی سالانہ فوجی مشقوں کا آغاز2016ء سے ہوا۔

2020ء تک 5 بار یہ مشقیں منعقد کی جا چکی ہیں جو دہشت گردی کے خلاف دونوں ممالک کے درمیان
مثالی تعاون کا ثبوت ہے۔
اپریل2018ء میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے روس کا اہم دورہ کیا۔
اس کے علاوہ پاکستان نیوی کی کثیر الملکی بحری مشق ”امن“ میں روس کی بحریہ بھرپور شرکت۔


شیئر کریں: