بچوں کو معزوری سے بچانے کے لیے 5 روزہ انسداد پولیو مہم شروع

شیئر کریں:

پاکستان سے پولیو کے خاتمے کی ایک اور کوشش 29 مارچ سے شروع کی گئی ہے۔ معاون برائے
صحت فیصل سلطان کا کہنا ہے پانچ روزہ انسداد پولیو کے دوران پانچ سال تک کے چار کروڑ سے
زیادہ بچوں کو پولیو سے محفوظ رکھنے کی ویکسین کے قطرے پلائے جانے کا ہدف رکھا گیا ہے۔

فرنٹ لائن ورکرز گھر گھر جاکر مہم کو کامیاب بنانے کے لیے سرگرم ہیں۔ مہم میں دو لاکھ پچاسی ہزار فرنٹ
لائن ورکرز حصہ لے رہے ہیں۔ کورونا احتیاطی تدابیر پر عمل کرتے ہوئے مہم شروع کی گئی ہے۔
مہم سے بچوں کی قوت مدافعت میں اضافہ ہوگا۔

پاکستان بھر میں 29 مارچ سے 5 روزہ انسداد پولیو مہم کا آغاز

کورونا وبا کے باوجود صحت سہولیات کی فراہمی حکومت کی اولین ترجیح ہے- تمام پاکستانی قومی
فریضہ سمجھتے ہوئے مہم کی کامیابی میں اپنا کردار ادا کریں۔ گذشتہ چھ مہینوں میں ہونے والی
کامیاب مہمات کے نتائج دیکھ رہے ہیں-

کوارڈینیٹر قومی ایمرجنسی آپریشنز سنٹر ڈاکٹر شہزاد بیگ نے کہا ہے کہ کامیاب مہمات سے بڑی حد تک کیسزاور وائرس میں کمی آئی ہے۔ فرنٹ لائن ورکرز بہترین کارکردگی سے مہم میں مطلوبہ ہدف حاصل کریں گے- والدین بچوں کو معذوری سے بچانے کے لئے ضرور ویکسین دیں۔ بچوں کے بہتر مستقبل کے لئے ویکسین پلانا لازمی ہیں۔

ڈیرہ اسماعیل خان میں پولیو ورکرز عزم و ہمت کی لازوال مثال


شیئر کریں: