پاکستان کا غیرملکی قرضہ 116 ارب ڈالر کی بلندسطح پر پہنچ گیا تحریک انصاف نے 20 ارب قرض لیا

شیئر کریں:

پاکستان کے بیرونی قرضے اور واجبات 115 ارب 76 کروڑ ڈالر کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئے ہیں۔ پی ٹی آئی حکومت کے سوا دوسال کے دوران بیرونی قرضوں
میں 19 ارب 64 کروڑ ڈالر کا اضافہ ہو گیا۔
اسٹیٹ بینک کے مطابق سوا دو سال کے دورانپاکستان کے بیرونی قرضوں میں مجموعی طور پر 20.4 فیصد کا اضافہ ہوا۔
پی ٹی آئی حکومت نے ستمبر 2018 سے دسمبر 2020 تک بیرونی زرائع سے مجموعی طور پر 14 ارب 22 کروڑ ڈالر کے نئے قرضے لیے اس دوران حکومتی اداروں اور کارپوریشنوں نے بھی 2 ارب 80 کروڑ ڈالر کے نئے قرضے لے لیے اس دوران نجی شعبے کے بیرونی قرضے 1 ارب 64 کروڑ ڈالر کا قاضافہ رکارڈ کیا گیا۔
مجموعی طور پر سوا دو سال کے دوران پاکستان کے بیرونی قرضے اور واجبات 19 ارب 64 کروڑ 50 لاکھ ڈالر کے اضافے سے 115 ارب 75 کروڑ 60 لاکھ ڈالر کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئے۔
یہ قرضے ڈالرز میں ہیں،، اس لیے روپے کی قدر میں
کمی سے ان میں اضافے کا کوئی تعلق نہیں بننتا۔
اسٹیٹ بینک کے اعدادو شمار کے مطابق سوا دو سال
کے دوران حکومت نئے بیرونی قرضوں پر مجموعی
طور پر 6 ارب 83 کروڑ ڈالر سود ادا کیا اگر نئے
قرضوں کی رقم سے اس کا نکال بھی دیا جائےتو
بھی پی ٹی آئی حکومت کے دور میں بیرونی قرضوں
میں 12 ارب 81 کروڑ 50 لاکھ ڈالر کا اضافہ ہوا۔


شیئر کریں: