بھارت کے انتہاپسند ہندو بائیڈن انتظامیہ میں شامل، عالمی تنظیموں کا احتجاجی خط

شیئر کریں:

جوبائیڈن انتظامیہ میں انتہاپسند ہندووں کی شمولیت پر انسانی حقوق کی عالمی تنظیمیں پھٹ پڑیں۔
19 سے زائد عالمی تنظیموں نے جوبائیڈن کو اس اہم مسلے پر ایکشن لینے کے لیے خط لکھ دیا۔
خط میں نہ صرف جوبائیڈن انتظامیہ میں شامل بھارتی نژاد امریکی ہندو انتہاپسند شہریوں کے خلاف انتہاپسندی میں ملوث ہونے کے ثبوت فراہم کیے گئے ہیں بلکہ بائیڈن سے ان کے خلاف تحقیقات کا مطالبہ بھی کیا گیا ہے۔
امریکی صدر جوبائیڈن کو ثبوت کے ساتھ بتایا گیا ہے ڈیموکریٹک پارٹی میں بھارتی کالی بھیڑیں شامل ہیں۔
یہ بھارتی شہری نہ صرف دہشت گرد ہندووں سے رابطے میں بلکہ انہیں مالی معاونت بھی فراہم بھی کر رہے ہیں۔
سمات شاہ اور امر جانی جوبائیڈن انتظامیہ میں شامل بھارتی شہری ہیں۔

یہ دونوں رہنما بھارت کی دہشت گرد تنظیموں کو براہ راست مالی معاونت میں ملوث ہیں۔
خط میں نومنتخب صدر کی توجہ بھارت میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کی طرف دلوائی گئی ہے۔
انسانی حقوق کی تنظیموں نے بھارت کا مکروع چہرہ بائیڈن کے سامنے بے نقاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت کی حکمران جماعت بی جے پی دیگر انتہاپسند جماعتوں کے ساتھ مل کر اقلتیوں کو نشانہ بنا رہی ہے۔

خط میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ بھارت میں مسلمان، عیسائی، بدھ مت اور دیگر مذاہب کے شہری غیر مخفوظ ہیں۔
آئے دن ہندتوا کے کالے قوانین کا استعمال کر کے بھارتی ریاست اقلتیوں کو نشانہ بنا رہی ہے۔
انسانی حقوق کی تنظیموں نے جوبائیڈن کی توجہ نچلی ذات کے ہندووں کی طرف بھی دلوائی ہے۔
خط میں بتایا گیا ہے کہ بھارت میں دلت ہندووں کے ساتھ غیر انسانی سلوک بھی جاری ہے۔

19 عالمی تنظیموں نے امریکی صدر جوبائیڈن سے مطالبہ کیا ہے کہ ان کی انتظامیہ میں شامل انتہاپسند ہندووں کے خلاف سی آئی اے کے پاس ثبوت موجود ہیں۔ جوبائیڈن ان افراد کے خلاف تحقیقات مکمل کرکے قانونی کارروائی کریں۔
خط میں دہلی میں موجود امریکی سفیر سے بھارت انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر آواز بلند کروانے کا مطالبہ بھی کیا گیا۔
عالمی تنظیموں نے امریکی صدر کو ان کا وعدہ یاد کرواتے ہوئے مطالبہ کیا ہے مسلہ کشمیر پر فوری طور پر عملی پالیسی واضع کی جائے اور مقبوضہ کشمیر کو بھارتی تسلط سے آزاد کروایا جائے۔

ٹرمپ مخالف صدارتی امیدوار جوبائیڈن کشمیر میں مظالم پر پریشان

خط لکھنے والوں میں انڈین سول واچ انٹرنیشنل، اسٹوڈینٹس اگینسٹ ہندتوا آئیڈیالوجی، انڈین امریکن مسلم کونسل، دلت سولیڈیرٹی فورم ان یوایس، ہندوز فار ہیومن رائٹس شامل ہیں۔

کولیژن آف سیٹل اینڈین امریکن، ایسوسی ایشن آف انڈین مسلم آف امریکا، بوسٹس ساوتھ ایشئن کولیٹو کولیژن اگینسٹ فاشیزم ان انڈیا، ساوتھ ایشیا لیف ایکٹویسٹ موومنٹ سیمت دیگر تنظیموں نے بھی خط میں امریکی صدر سے ان کی انتظامیہ میں موجود انتہاپسند ہندووں کے خلاف کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔


شیئر کریں: