سابق صدر آصف علی زرداری پر پارک لین کیس میں‌ فرد جرم عائد کر دی گئی

شیئر کریں:

حتساب عدالت نے پارک لین ریفرنس میں عدالت نے سابق صدر آصف علی زرداری
پر فرد جرم عائد کر دی ہے۔
احتساب عدالت میں پارک لین ریفرنس کی سماعت ہوئی آصف علی زرداری ویڈیو لنک
کے ذریعے بلاول ہاؤس کراچی سے پیش ہوئے ۔
کیس کی سماعت احتساب عدالت کے جج اعظم خان نے کی اقبال خان نوری اور طحہ رضا
کے وکلاء نے فرد جرم رکوانے کی درخواستیں دائر کر دیں
عدالت نے فرد جرم رکوانے کی استدعا مسترد کر دی ملزمان کی حاضریاں لگانے کا سلسلہ جاری رہا
ملزمان کے وکلانے عدالت کو بتایاکہ ہمیں ملزمان سے ملنے کی اجازت بھی نہیں دی گئی

ہمیں فرد جرم سے پہلے ملنے کی اجازت دی جائے جس پر عدالت نے کہاکہ پہلے فرد جرم ہو جانے دیں
اس کے بعد آرڈر کر دیں گے
آپ ملزمان سے ملتے رہنا فرد جرم تو آج ہی عائد کی جائے گی آپ بعد میں بریت کی
درخواست دائر کر کے دلائل دیں

ملزمان کے وکیل کا کہناتھاکہ میرے موکل پر فرد جرم عائد کی ہی نہیں جا سکتی
میرے موکل کو شفاف ٹرائل کا موقع دیا جانا چاہیے سابق صدر آصف علی زرداری کا
ویڈیو لنک کے ذریعے جج محمد اعظم خان سے مکالمہ ہوا ۔
آصف علی زرداری نے جج سے مکالمہ کرتے ہوئے کہاکہ میرے وکیل سپریم کورٹ میں
موجود ہیں ان کے بغیر فرد جرم عائد نہیں کی جا سکتی

جس پر عدالت کا کہنا تھاکہ فرد جرم آپ پر عائد کی جائے گی سادہ سے سوالات ہیں
جن کے آپ نے جواب دینے ہیں سابق صدر آصف زرداری کا کہناتھاکہ مجھے 20 سال ہو گئے
ہیں میرے وکیل جب موجود ہیں تو فرد جرم عائد نہیں کی جا سکتی
جس پر عدالت نے انہیں کہاکہ اگر آپ کے وکیل نہیں آتے تو ہم ان کی غیرحاضری لگائیں گے۔
آصف علی زرداری کا کہنا تھاکہ آپ یہ لکھ دیں کہ میرے وکیل سپریم کورٹ میں موجود تھے
پھر بھی آپ نے فرد جرم عائد کی اور آپ رولنگ دے دیں کہ وکیل موجود نہیں تو آپ اپنا
کیس خود لڑیں
عدالت نے کہاکہ میں رولنگ دیدوں؟
میں کسی وکیل کو زبردستی عدالت نہیں بلا سکتااور آپ مجھ سے رولنگ نہ مانگیں کہ میں
آپ کو رولنگ دوں ۔
جس پر آصف علی زرداری کا کہناتھاکہ جب آپ کے سامنے پیش ہوا ہوں تو رولنگ بھی آپ سے
مانگوں گا نا۔
آصف علی زرداری آپ پاکستان کے صدر رہے ہیں جج اعظم خان نے فردجرم پڑھ کر سنا دی
عدالت نے سابق صدر آصف علی زرداری پر فرد جرم عائد کر دی آصف علی زرداری نے فرد
جرم سے انکار کر دیا جس پر آصف علی زرداری کاکہنا تھاکہ میں تمام الزامات سے انکار
کرتا ہوں عدالت نے آصف علی زرداری سے سوال کرتے ہوئے کہاکہ کیا آپ نے فرنٹ
کمپنی پارتھینن کے ذریعے غیر قانونی 1.5 بلین روپے کا قرض حاصل کر کے فراڈ کیا؟
سابق صدر آصف علی زرداری کا کہناتھاکہ میں تمام الزامات کو رد کرتا ہوں بلکہ
آپ کراچی آ کر اس عمارت کو بھی دیکھ لیں
عدالت نے انور مجید، شیر علی ، فاروق عبداللہ اور سلیم فیصل پر بھی فرد جرم عائد
کی لیکن انہوں‌ نے بھی صحت جرم سے انکار کر دیا


شیئر کریں: