سندھ میں جانوروں کی منڈیاں کورونا پھیلانے کا سبب بنے لگیں

شیئر کریں:

عید الضحی کی آمد میں ابھی کافی وقت ہے لیکن مویشی مںڈیاں لگنی شروع ہو گئی ہیں۔
کورونا وبا کی وجہ سے سندھ کی حکومت قربانی کے جانوروں کی منڈیوں پر پہلے ہی پابندی لگا چکی ہے۔
منڈیوں سے وائرس پھیلنے کے پیش نظر پابندی کا اعلان کیا گیا لیکن اس کے باوجود منڈیاں لگائی جانے لگی ہیں۔
دادو کی انتظامیہ اور سیاسی رہنما دیکھتے رہ گئے اور بیوپاریوں نے منڈی سجا بھی لی۔
ہزاروں افراد روزآنہ غیرقانونی منڈی کا رخ کر رہے ہیں، کورونا سے خود اور دوسروں کو محفوظ
رکھنے کے لیے نافذ العمل ایس او پیز پر بھی عملدرآمد نہیں کیا جارہا۔
خریدار ہوں یا بیوپاری سب ہی سماجی فاصلوں کی خلاف ورزی کرتے نظر آتے ہیں۔
بیوپاری کہتے ہیں مویشی منڈیوں پر عائد پابندی کی وجہ سے گھروں کے چولہے ٹھنڈے ہو چکے ہیں۔
بچوں کو بھوک سے مرتا نہیں دیکھ سکتے۔

کورونا نے پاکستان کو 13ویں نمبر پر پہنچا دیا

بیوپاریوں کا گلہ اپنی جگہ لیکن اس طرح کورونا پھیلتا ہے تو نقصان ان کا بھی زیادہ ہو گا۔
زندگی کا کوئی نعم البدل نہیں ہو سکتا، کاروبار کرنا بھی ہے تو ایس او پیز کو بھی مدنظر رکھنا چاہیے۔
ایسے میں انتظامیہ پر بھاری زمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ لوگوں سے قانون پر عملدرآمد یقینی بنانے میں
اپنا کردار ادا کرے۔


شیئر کریں: