حکومت کا دعوی مسترد،پاکستان میں کرپشن بڑھ گئی

شیئر کریں:

پاکستان میں کرپشن کم کرنے کے پی ٹی آٗئی حکومت کے دعوے ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل نے غلط ثابت کر دئیے ہیں۔
2019 کی کرپشن کی عالمی درجہ بندی میں پاکستان 3 درجہ تنزلی کے بعد 120ویں نمبر پر پہنچ گیاہے۔
پاکستان میں کرپشن کم نہیں بلکہ بڑھ گئی ہے۔
ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل نے 2019 میں کرپشن سے متعلق رپورٹ جاری کردی۔
2018 کی کرپشن پرسیپشن انڈیکس میں پاکستان کا اسکور 33 تھا جو 2109 میں 32 ہوگیا۔
انڈیکس کے 180 رینکس میں پاکستان کا رینک 120 رہا۔
رپورٹ کے مطابق موجودہ چیئرمین جاوید اقبال کی زیرقیادت نیب کی کارکردگی بہتر رہی۔
نیب نے بدعنوان عناصر سے 153 ارب روپے نکلوائے، 2019 میں زیادہ تر ممالک کی کرپشن کم
کرنے میں کارکردگی بہتر نہیں رہی۔
پاکستان سے کرپشن کے خاتمے کے لیے نیب سمیت کئی ادارے متحرک ہیں ۔
مگر ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کی تازہ ترین رپورٹ میں پاکستان کا اسکور ایک درجہ کم ہو کر بتیس ہو گیا۔
ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کی کرپشن پرسیپشن انڈیکس کے 180 رینکس میں پاکستان کا نمبر 120 ہے۔

https://www.transparency.org/news/feature/cpi_2019_global_highlights
چند سال پیچھے جائیں تو دو ہزار پندرہ میں اس کا اسکور تیس تھا۔
دو ہزار سولہ اور سترہ میں پاکستان میں کرپشن میں کمی آئی اسکور بتیس رہا۔
دو ہزار اٹھارہ کی انڈیکس میں پھر رینکنگ میں بہتری آئی پاکستان کا اسکور تینتیس رہا ۔
رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ نیب پاکستان نے بدعنوان عناصر سے 153ارب روپے نکلوائے ۔
موجودہ چیئرمین نیب جاوید اقبال کی زیرقیادت نیب کی کارکردگی کو بہتر قرار دیا ہے ۔
ٹرانسپرینسی رپورٹ میں کرپشن پر قابو پانے کے لیے تجاویز بھی دی گئی ہیں۔
سیاست میں بڑے پیسے اور اثرورسوخ کو قابو کیا جائے۔
بجٹ اور عوامی سہولیات ذاتی مقاصد اور مفاد رکھنےوالوں کے ہاتھوں میں نہ دی جائیں۔
غلط تشہیر پر پابندی لگائی جائے، دنیا بھر میں کرپشن روکنےکےلیے لابیز کو ریگولیٹ کیا جائے ۔
سماجی کارکن، نشاندہی کرنےوالوں اور صحافیوں کو تحفظ دیا جائے ۔
رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ زیادہ تر ممالک کی کرپشن کم کرنےمیں کارکردگی بہتر نہیں رہی۔
جن ممالک میں کرپشن کم ہے ۔
اس فہرست میں ڈنمارک اور نیوزی لینڈ ستاسی ستاسی پوائنٹس کے ساتھ ٹاپ پر ہیں۔
اس کے بعد فن لینڈ، سنگاپور اور سویڈن کا نمبر ہے ۔
امریکا، برطانیہ، فرانس اور کینیڈا کا انسداد بدعنوانی کا اسکور بھی کم رہا۔
پڑوسی ملک بھارت کے اسکور میں اضافہ ہوا نا کمی۔
دو ہزار اٹھارہ کی طرح اسکور اکتالیس رہا۔


شیئر کریں: