January 16, 2020 at 9:08 pm

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ایران کے ساتھ کشیدگی میں اضافہ مشرق وسطیٰ کے لیے تباہ کن ہو گا،، خطہ ایک اور جنگ کا متحمل نہیں،، ایران اور سعودی عرب میں کشیدگی کم کرانے کی بھرپور کوششیں کررہے ہیں،، مہاتما گاندھی کو قتل کرنے والوں کا برسرِاقتدار آنا بھارت اور اس کے پڑوسیوں کے لیے ایک المیہ ہے۔
وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان مشکل خطے میں واقع ہے،،، اقدامات کو متوازن رکھنے کی ضرورت رہتی ہے،سعودی عرب ایک اچھا دوست ہے،، ایران سے بھی اچھے تعلقات رہے ہیں،سعودی عرب اور ایران کے درمیان جنگ پاکستان کے لیے تباہ کن ثابت ہو گی۔
جرمن خبررساں ادارے ڈی ڈبلیو کو خصوصی انٹرویو میں وزیراعظم نے کہا سعودی عرب اور ایران کے درمیان کشیدگی کم کرنے کی پوری کوشش کررہے ہیں،، خطہ ایک اور جنگ کا متحمل نہیں، ایران کے ساتھ کشیدگی میں اضافہ مشرق وسطیٰ کے لیے تباہ کن ہو گا،، وزیراعظم نے کہا افغانستان میں امن قائم کرنے کی پوری کوشش کر رہے ہیں، طالبان، امریکیوں اور افغان حکومت کی امن قائم کرنے میں کامیابی کے لیے دعاگو ہیں۔
وزیراعظم نے کہا بھارت پر شدت پسند نظریے ہندوتوا کا قبضہ ہے،، آر ایس ایس کی بنیاد 1925 میں جرمن نازیوں سے متاثرہوکر رکھی گئی،، آر ایس اسی نظریہ مسلمانوں اور مسیحوں سمیت تمام اقلیتوں سے نفرت پر مبنی ہے،مہاتما گاندھی کو قتل کرنے والوں کا برسرِاقتدار آنا بھارت اور اس کے پڑوسیوں کے لیے ایک المیہ ہے،
وزیراعظم نے کہا مقبوضہ جموں و کشمیر 5ماہ سے محاصرے میں ہے،، بھارت نے یکطرفہ طور پر کشمیر کو اپنے ریاستی علاقے میں ضم کر لیا، حالانکہ اقوام متحدہ کی کئی قراردادوں کے مطابق بھی یہ خطہ پاکستان اور بھارت کے مابین ایک متنازعہ علاقہ ہے۔

Facebook Comments