January 16, 2020 at 12:30 am

ایوانِ نمائندگان نے صدرٹرمپ کے خلاف سینٹ میں ٹرائل چلانے کےحق میں ووٹ دے دیا۔
قرارداد کے حق میں 228 اور مخالفت میں 193 ووٹ ڈالے گئے۔
صدر ٹرمپ کی ری پبلیکن پارٹی کے کسی رکن نے مواخذے کے حق میں ووٹ نہیں دیا۔
سینیٹ میں اکثریتی رہنما میچ میکونل کے مطابق صدر ٹرمپ کے خلاف مواخذے کی کارروائی کا آغاز منگل سے ہو گا۔
کارروائی دو ہفتے میں مکمل ہونے کا امکان ہے۔
اس سے پہلے سینیٹ میں ٹرمپ کے خلاف مواخذے کی کارروائی کے لیے اسپیکر نینسی پلوسی نے پروسیکیوٹرز کا اعلان کیا۔
نینسی پیلوسی نے ہاوس انٹیلی جنس کمیٹی کے چیرمین ایڈم شیف کو سینیٹ میں ہونے والی مواخذے کی کارروائی میں استغاثہ کا سربراہ مقرر کیا۔
جوڈیشری کمیٹی کے چیرمین جیراڈ نیڈلر،حکیم جیفرایز، اور جیسن کرو بھی پروسیکیوٹرز نامزد ہوئے ہیں۔
وال ڈیمنگز، زو لوفگرین اور سلویا گارشیا بھی مواخذہ کی کارروائی میں پروسیکیوٹر ہوں گے۔
سینیٹ میں امریکی صدر پر اختیارات کے غلط استعمال اور کانگریس کے کام میں رکاوٹ ڈالنے کے الزامات پر ٹرائل ہو گا۔
صدر ٹرمپ کو گھر بھیجنے کے لیے ڈیموکریٹس کو دو تہائی اکثریت کی ضرورت ہو گی۔
سینیٹ میں اکثریت حاصل ہونے کی وجہ سے صدر ٹرمپ کے برخاست ہونے کے امکانات نہ ہونے کے برابر ہیں۔

Facebook Comments