January 15, 2020 at 10:16 pm

پاکستان کی گلوبل کنزیومر کانفیڈنس انڈیکس میں درجہ بندی مزید کم ہو گئی۔‬
‫عوام کی اکثریت ملکی معاشی صورتحال سے مایوس اور مستقبل قریب میں بہتری کی بھی امید نہیں رکھتی۔‬
‫پیرس کے ریسرچ ادارے اپسوس کی رپورٹ کے مطابق پاکستان میں صارفین کے اعتماد میں مسلسل کمی آ رہی ہے۔ گلوبل کنزیومر کانفیڈنس انڈیکس میں پاکستان کا اسکور 32.8 رہ گیا۔‬
‫یہ انڈیکس 6 ماہ قبل 33.8 تھا۔‬
‫پاکستان کا اسکور ایشیا پیسفک ریجن کے اوسط اسکور سے 63 فیصد کم ہے۔‬
‫ادارے کی طرف سے مالی سال کے پہلے چھ ماہ کے دوران کیے گئے سروے کے مطابق جواب دہندگان کی اکثریت کا کہنا تھا کہ ملک غلط سمت میں جارہا ہے اور ان کوخطرہ ہے کہ معیشت آئندہ 6 ماہ میں مزید کمزور ہوجائے گی۔‬
‫مہنگائی، بےروزگاری اور اضافی ٹیکسز بڑے تین مسئلے ہیں۔‬
‫سروے میں 79 فیصد افراد نے اپنی اور قومی معیشت کے حوالے سے مایوسی کا اظہار کیا۔‬
‫ان کا کہنا تھا کہ گزشتہ 12 ماہ میں انہیں بنیادی گھریلو اشیا خریدنے میں بھی مشکلات کا سامنا رہا ہے۔‬
‫مستقبل کے لیے سرمایہ کاری کرنے اور اپنے روزگار بچانے کی صلاحیت کمزور ہوئی ہیں۔‬
‫10 جواب دہندگان میں سے 4 کا کہنا تھا کہ وہ ذاتی طور پر کسی ایسے شخص کو جانتے ہیں جس نے اپنا روزگار کھویا ہے۔‬
‫10 میں سے صرف  ایک نے کہا کہ ان کی موجودہ معاشی صورتحال بہتر ہے اور انہوں نے اپنا مستقبل بہتر ہونے کی امید ظاہر کی۔‬
‫رپورٹ  کے مطابق پاکستان میں سرمایہ کاری کا انڈیکس بھی کم ہو کر 19.1 فیصد رہ گیا۔‬
‫یہ انڈیکس بھارت کے 64.7، جنوبی افریقہ کے 40.6، ترکی کے 27.5 اور برازیل کے 50.4 سے کہیں کم ہے۔

Facebook Comments