14 سال بعدبلوچستان کے اجڑے دیار پھر سےآباد

شیئر کریں:

بلوچستان کے اجڑے دیار پھر سے آباد ہونے لگے ہیں۔امن کی فضا پیدا ہوتے ہی مختلف قبائل نے اپنے آبائی علاقوں کا رخ کرنا شروع کردیا۔

یہ کیازئی قبیلہ ہے جو صدیوں سے ڈیرہ بگٹی بلوچستان کے علاقے لوٹی سی میں آباد تھا۔2005میں اس علاقے میں بد امنی کی فضا پیدا ہوئی۔ ہر طرف خون بہنے لگا جس سے یہاں کے باسی غیر محفوظ ہوگئے

چار و لاچار کیانی قبیلے نے اس علاقے سے ہجرت کرنے کا فیصلہ کرلیا۔ جو قبیلہ صدیوں ساتھ رہا ان میں کچھ خاندان پنجاب جا بسے اور بعض نے سندھ کی طرف ہجرت کی۔ لوٹی سی کا علاقہ ویران ہوا۔

مکین نہ ہونے سے یہاں کے کھیت بنجر ہوگئے اور گھر کھنڈرات میں تبدیل ہوگئے۔علاقہ چھوڑنے کے کا غم اس قبیلے کے ہر فرد کے چہرے سے عیاں تھا۔

آج 14 سال بعد اس قبیلے نے دوبارہ اپنے آبائی علاقے کا رخ کرلیا۔لوٹی سی کی رونقیں پھر سے لوٹ آئیں۔جہاں ہر وقت ویرانی اور خاموشی آسیب بن کرقابض تھی اب وہاں ان مکینوں کی خوش گپیوں اور قہقہوں سے منور ہوگیا۔

ضلعی انتظامیہ نے بھی ان آباد کاروں کیلئے ہنگامی بنیادوں پر ڈسپینسری ،پینے کیلئےصاف پانی اوراسکول کے کام کا آغاز کردیا ۔اب لوٹی سی کی رونقیں پھر سے لوٹ آئیں۔


شیئر کریں: