September 12, 2019 at 10:52 pm

مہنگائی اور اقتصادی ترقی کی سست رفتار نے پاکستان میں کاروں کی خریداری 41 فیصد کم ہو گئی ہے۔ 62 ماہ کے بعد کاروں کی فروخت میں اتنی زیادہ کمی دیکھی گئی۔پاکستان آٹو مینوفیکچرر ایسوسی ایشن کے مطابق اگست کے دوران مجموعی طور پر 10 ہزار 496 کاریں فروخت ہوئیں۔ گزشتہ سال اگست میں 17 ہزار 7 سو کاریں فروخت ہوئی تھیں۔ اگست میں مجموعی طور پر ایک لاکھ 26 ہزار 336 موٹر سائکلیں اور تھری وہیلر گاڑیاں فروخت ہوئیں،، جو گزشتہ سال سے 10 فیصد کم ہیں،، 2 ہزار 545 ٹریکٹر فروخت ہوئے،، جو پہلے سے 37 فیصد کم ہیں۔ بسوں اور ٹرکوں کی فروخت میں 61 فیصد کمی رکارڈ کی گئی،، اگست میں صرف 281 بسیں اور ٹرک خریدے گئے،، گزشتہ اگست میں 722 بسیں اور ٹرک فروخت ہوئے تھے،، اقتصادی ماہرین کے مطابق گاڑیوں مہنگی ہونے کے علاوہ ملک کی مجموعی اقتصادی صورتحال میں بے یقینی کے باعث گزشتہ گاڑیوں کی فروخت میں گزشتی ایک سال سے مسلسل کمی دیکھی جارہی ہے۔ رپورٹ کے مطابق ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں مسلسل کمی کے باعث کاریں بنانے والی تینوں بڑی فیکٹریوں نے بھی متعدد بار گاڑیوں کی قیمت بڑھائی،، بنیادی شرح سود میں مسلسل اضافے کی وجہ سے ٹرانسپورٹ کے لیے بینکوں سے قرض بھی پہلے سے کافی مہنگا ہو گیا۔

Facebook Comments