اسٹیٹ بینک آف پاکستان کا مانیٹری پالیسی کا اعلان

شیئر کریں:

اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے مانیٹری پالیسی کا اعلان کرتے ہوئے بنیادی شرح سود میں 1.5 فیصد کا بڑا اضافہ کر دیا۔اسٹیٹ بینک نے مانیٹری پالیسی میں ریکارڈ اضافہ کیا، بنیادی شرح سود 1.5 فیصد اضافے کے بعد 10.75 فیصد سے بڑھ کر12.25 فیصد کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے۔اسٹیٹ بینک کے مطابق مارچ 2019 میں مہنگائی کی شرح 9.4 فیصد رہی۔ اپریل میں شرح 8.8 فیصد تھی۔ جولائی سے اپریل کے دوران مہنگائی کی شرح 7 فیصد رہی۔ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے سبب مہنگائی بڑھی۔ اجناس قیمتوں میں بھی اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔
اسٹیٹ بینک کا کہنا ہے کہ بجٹ خسارہ میں اضافے سے حکومت کا قرض کیلئے مرکزی بینک پر انحصار بڑھا ہے، جولائی تا مارچ 2019ء کے دوران رواں کھاتوں کا خسارہ 29 فیصد کم ہوا ہے۔ مالی سال کے پہلے 9 ماہ میں رواں کھاتو ں کا خسارہ 9.6 ارب ڈالر رہا۔
معاشی ماہرین کا کہنا ہے کہ شرح سود میں اضافہ سے سب سے زیادہ نقصان حکومت کا ہوا ہے۔ اس کا مقصد مہنگائی کم کرنا ہوتا ہے۔ بنیادی شرح سود بڑھنے سے حکومت کے مقامی قرضوں میں 3 کھرب روپے (300 ارب روپے) کا اضافہ ہو جائے گا جبکہ گاڑیوں اور گھروں کی خریداری پر قرض لینا مہنگا پڑ سکتا ہے۔


شیئر کریں: