March 14, 2019 at 6:57 pm

پاکستان میں لوٹوں کے جیتنے کا مقابلہ تیزی سے جاری ہے۔ اس فہرست میں پہلی سیڑھی کے لیے دوڑیں لگی ہوئی ہیں۔ پاکستان مسلم لیگ ن کے ارکان اسمبلی محمد پرویز ملک، خواجہ عمران نذیر اور عامر خان نے کہا ہے کہ چار مرتبہ لوٹے کا اعزاز حاصل کرنے والے وفاقی وزیر کو دوسروں پر تنقید کا کوئی حق نہیں پہنچتا ، لیپ ٹاپ سکیم کے بعد سالڈ ویسٹ مینجمنٹ کمپنی میں بھی اہم حکومتی وزیر کا بیان کہ اس کمپنی میں کوئی گھپلے نہیں ہوئے اور نہ ہی آفسران نے ملازمین کی تنخواہیں وصول کی ہیں۔ نیازی اور تبدیلی سرکارکے لئے یہ باعث شرم ہے۔ سرکاری محکموں اور حکومتی وزراء کی طرف سے پنجاب اسمبلی کے ایوان میں پیش کی گئی یہ رپورٹ ن لیگ کی قیادت کی بے گناہی کا بہت بڑا ثبوت ہے،حکمرانوں کے اندر سے انسانیت خاص طور پر وفاقی وزیر اطلاعات سے ختم ہو چکی ہے، کتنی شرک کی بات ہے کہ اییک بیمار شخص وہ بھی جو ملک کا تین مرتبہ وزیر اعظم رہ چکاہو اور پاکستان کو دنیا کی ساتویں ایٹمی پاور بھی بنایا ہو اس کی تضحیک کی جا رہی ہے،حکومت کی سات ماہ کی کارکردگی زیرو ہے اب تک جو بھی کا کئے گئے ہیں وہ ن لیگ حکومت کے ہی شروع کردہ ہیں،پنجاب کے ترقیاتی بجٹ پر4سو روپے کٹ لگانے والی حکومت کیا ترقیاتی کام کرے گی۔گذشتہ روزپارٹی آفس میں گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بلاول بھٹو زرداری کی نواز شریف صاحب جیل میں ملاقات کے بعد پوری حکومت بالخصوص عمران نیازی بوکھلاہٹ کا شکار ہیں۔ فواد چوہدری اپنی نوکری بچانے کی ناکام کوشش کر رہے ہیں، فواد چوہدری اپنے اختیارات کی حفاظت کریں دوسروں کی فکر چھوڑ دیں۔ انہوں نے کہا کہ،پی ٹی آئی حکومت ہوش کے ناخن لیں، معیشت کے چیلنج کو سنجیدہ لیں، ضد، انا اور تکبر ایک طرف رکھ کر ’’میثاق معیشت‘‘کی طرف آئے کہ مضبوط اور مستحکم معیشت سے ہی قومی سلامتی کو نابل تسخیر بنایاجاسکتا ہے،حکومت قرض بھی لیتی جارہی ہے اعوام کو ریلیف نہیں دے رہی اور قرض بھی لیاجارہا ہے۔ ترقی پروگرام بھی کوئی نہیں تو پھر پیسہ کہاں جارہا ہے؟

Facebook Comments