March 13, 2019 at 6:39 pm

بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے پیپلز پارٹی پر ہمیشہ پنڈی میں کربلابرپا کی جاتی ہے۔ انہیں بے نامی اکاونٹس کیس میں گھسیٹنے کی کوشش ہورہی ہے۔ نیب پولیٹیکل انجینئرنگ کے لئے استعمال ہورہا ہے۔حکومت کو کالعدم تنظیموں کی حمایت میں بیانیہ تبدیل کرنا ہوگا۔ کالعدم تنظیموں سے رابطے پر پی ٹی آئی کے تین وزراکو ہٹانے کا مطالبہ کردیا۔سندھ اسمبلی میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ جج ہو یا جرنیل احتساب سب کا ہونا چاہیے۔اسپیکر سندھ اسمبلی ایک آئینی عہد ہ ہے۔انہیں گرفتار کیا ہے،، تو ان تمام لوگوں کو بھی پکڑا جائے جن کے خلاف انکوائری ہورہی ہے۔بے نامی اکاونٹس کیس کی سندھ سے اسلام آباد منتقلی غیرقانونی ہے۔ صرف بھٹوز اور جیالوں کے لئے پنڈی کا انتخاب کیوں کیا جاتا ہے۔ نیب ایسا ادارہ ہے جہاں فرشتہ بھی بیٹھ گیا تب بھی سیاسی مخالفین کو نشانہ بنایا جائے گا۔بی بی نے میثاق جمہوریت اور منشور میں کہا تھا نیب کو ختم کرنا ہے۔نیب قانون کو تبدیل نہ کرنا ہماری بھی ناکامی ہے۔نیب انسانی حقوق کی خلاف ورزی اور عورتوں پر تشدد کے خلاف حرکت میں کیوں نہیں آتا۔۔بلاول بھٹو نے کہا پاکستان کو بچانے کے لئے نیشنل ایکشن پلان پر عمل کرنا ہوگا۔ وزیراعظم اپوزیشن کو ہدف تنقید بنانے ہیں ،، ملک دشمنوں اور کالعدم تنظیموں کے خلاف نہین بولتے۔کالعدم تنظیموں کو کہاں سے پیسے ملتے ہیں،، اس پر بھی جے آئی ٹی بننی چاہیے۔ پی ٹی آئی کے تین وزرا کے کالعدم تنظیموں سے براہ راست تعلقات ہیں،، انہیں عہدوں سے ہٹایا جائے۔۔۔۔۔۔ بلاول بھٹو نے کہا کہ اٹھارہویں ترمیم پر حملے کئے جارہے ہیں۔ اس کے ساتھ کوئی چھیڑ چھاڑ کی گئی ،، تو وہ سڑکوں پر نکلنے اور مارچ کرنے کو تیار ہیں۔۔۔۔۔۔انہوں نے کہا کہ نواز شریف کی حالت تشویشناک محسوس ہوتی ہے۔ جیل میں ملاقات کے دوران انہیں این آئی سی وی ڈی میں علاج کی پیشکش کی تھی۔

Facebook Comments