یہ سفر مشکل ہوگا

شیئر کریں:

تحریر: شہزادہ احسن اشرف شیخ

کبھی کسی جرمن بچے نے اپنی فوج پر دوسری عالمی جنگ ہارنے پر طنز نہیں کیا۔ کسی جاپانی بچے نے دوسری عالمی جنگ ہارنے پر اپنی فوج کا مذاق نہیں بنایا۔ کبھی کسی امریکی بچے نے اپنی فوج کو ویتنام اور افغانستان جنگ میں شکست پر تضحیک کا نشانہ نہیں بنایا۔
ان لوگوں کو یہ بتایا جاتا ہے کہ کس طرح ان لوگوں کی تعریف کی جائے جو وطن کی حفاظت کرنے کے لیے کوشش کرتے ہیں۔
شہریوں کو بتایا جاتا ہے کہ نتائج کچھ بھی ہوں مگر ان لوگوں کی قربانیوں کو کبھی فراموش نہیں کیا جاتا جو ان کی اور وطن کی حفاظت کے لیے اپنی جانوں کی پرواہ کیے بغیر میدان میں اترتے ہیں۔
لیکن افسوناک امر یہ کہ پاکستان میں کچھ عناصر یہ سب کچھ کرنے میں مصرف ہیں۔
ہمارے نوجوان جو پرائیویٹ اسکولوں میں بھاری فیسیں ادا کرکے تعلیم حاصل کرتے ہیں ان کے اسلیبلس میں دشمن کا ایجنڈا شامل کیا جارہا ہے۔
ہمارے نوجوانوں کو وہ تاریخ پڑھائی جاتی ہے جو دشمن کی لکھی ہوئی اور اس میں دشمن کی سوچ اور ایجنڈا شامل ہے۔
ہر ملک میں ایک فوج ہوتی ہے۔ اگر ملک میں آپ کی فوج نہ ہوتوملک میں دشمن کی فوج ہوگی۔
ہمیں اپنے دیسی لیبرلز کو سمجھانا ہوگا کہ ہر چیز کے لیے افواج کو قصور وار ٹھہرانا بند کریں۔
اگر ملک کی آرمی ختم ہوگئی تو پاکستان ختم ہوجائے گا، خاکام بھادان
پاکستانی افواج کو دشمن صرف ایک طریقے سے شکست دے سکتے ہیں وہ طریقہ عوام کو فوج کے خلاف کھڑا کر کے ہے۔
دشمن ہمارے شہریوں کو افواج کے سامنے کھڑا کرنا چاہتا ہے۔
دشمن جنرلز اور فوجیوں میں تقسیم پیدا کرنا چاہتا ہے۔
دشمن سوشل میڈیا کو استعمال کرکے پاکستان کے محافظوں کے خلاف نفرت پیدا کرنا چاہتا ہے۔
موجودہ دور میں ہمیں اپنی افواج کے ساتھ کھڑا ہونا ہوگا۔ ہمیں ان لوگوں کو نہیں سننا چاہیے جو ففتھ جنریشن وار کا حصہ ہیں اور بیرونی ہاتھوں میں کھیل رہے ہیں۔
شہریوں کو ایسے لوگوں کے خلاف اٹھ کھڑا ہونا چاہیے جو بیرونی فنڈنگ لے کر اپنے ہی محافظوں کے خلاف زہر اگل رہے ہیں۔

پاکستان زندہ باد
شہزادہ احسن اشرف شیخ
سابق چیئرمین اینڈ مینیجنگ ڈائریکٹر پی آئی اے
سابق وفاقی وزیر برائے صنعت و پیداوار


شیئر کریں: