گوجرانوالہ جلسہ نے عمران خان اور سلیکٹرز کو حیران و پریشان کر دیا

شیئر کریں:

گوجرانوالہ جلسہ سے اپوزیشن جماعتوں نے حکومت کے خلاف جنگ کا طبل بجا دیا ہے۔
مسلم لیگ ن کے گڑھ گوجرانوالہ میں آج کے جلسہ میں عوام کی بڑی تعداد نے شرکت کر کے
اپوزیشن کے موقف کی تائید کر دی ہے۔

گوجرانوالہ میں ڈی جے بٹ ٹیم ممبر کرنٹ لگنے پر اسکرین سے گرپڑا

اس جلسہ میں مریم نواز، بلاول بھٹو اور مولانا فضل الرحمن کی قیادت میں الگ الگ ریلیاں
جلسہ گاہ پہنچیں۔


اس کے علاوہ لیگی رہنماؤں احسن اقبال، رانا ثنااللہ اور مریم اورنگزیب بھی ریلیوں کے ساتھ پنڈال پہنچیں۔
عمران خان کو مسند وزارت عظمی بیٹھے سوا دو سال کا عرصہ گزرا اس دوران انہیں کسی قسم
کی مزاحمت کا سامنا نہیں کرنا پڑا۔

لیکن گوجرانوالہ کے جلسہ نے عمران خان اور ان کی حمایت کرنے والوں کو حیران اور پریشان کر دیا ہے۔
ملکی سیاسی صورت حال اور بدترین معاشی صورت حال پر نظر رکھنے والوں کا ماننا ہے کہ اب
حکومت کے برے دن شروع ہو چکے ہیں۔

گوجرانوالہ جلسہ پر ایک ارب روپے کا خرچہ

اپوزیشن جماعتوں نے اگر اسی طرح اتحاد کا مظاہرہ کیا تو تبدیلی سے کوئی بھی نہیں روک سکے گا۔
پہلی مرتبہ اپوزیشن نے مہنگائی کا نعرہ لگایا ہے کیونکہ مہنگائی کی اس چکی نے سب ہی کو پیس کر رکھ دیا ہے۔
عوام کی نگاہیں بھی گوجرانوالہ جلسہ کے بعد کی بدلتی صورت حال پر لگ گئی ہے۔
بظاہر عمران خان کے پاس بھی یہ آخری موقع ہی لگ رہا ہے اگر انہوں نے کسی بھی طرح مہنگائی کو کم کردیا تو وہ محفوظ رہ سکتے ہیں ورنہ تبدیلی ناگزیر ہو چکی ہے۔


شیئر کریں: