کورونا کی تشخیص کیلیے ایئر پورٹ پر کتے تعینات

شیئر کریں:

دنیا بھر میں کورونا وائرس کی وباء تیزی کیساتھ بڑھ رہی ہے
جہاں پر کچھ ممالک اس وباء سے نمٹنے کے لیے تگ و دو میں مصروف ہیں وہیں
پر چلی سے ایک انوکھی خبر آئی ہے جہاں پر ایک ہوائی اڈے پر مسافروں میں
کورونا کی علامات کا سراغ لگانے کے لیے کتے تعینات کر دیے گئے ہیں
یہ کتے آنے جانے والے مسافروں کے سامان کو سونگھ کر کورونا وائرس کا سراغ لگاتے ہیں۔

کورونا وائرس کا انسانوں کے ساتھ اگلے 10 سال تک رہنے کا انکشاف

چلی کے سینٹیاگو انٹرنیشنل ایئر پورٹ پر مسافر صحت کاؤنٹرز پر خصوصی پیڈز رکھے گئے ہیں۔
مسافر اپنی ناک، گردن اور کلائیوں کو اس سے پونچھ کر شیشے کے ایک ڈبے میں ڈال دیتے ہیں
جس کے بعد ان سراغ رساں کتوں کا کام شروع ہوتا ہے۔

نئی قسم کا کورونا ہانگ کانگ کے بعد لیبیا اور فرانس پہنچ گیا

گولڈن ریٹریورز اور لیبرا ڈورز نسل کے یہ کتے ایئر پورٹ پر
کورونا کی تشخیص کے لیے حکام کے لیے کافی مددگار ثابت ہو رہے ہیں۔
نشان دہی ہونے پر متاثرہ شخص کو حکام علاج معالجے
کی غرض سے اسپتال یا قرنطینہ کے لیے لے جاتے ہیں۔
متحدہ عرب امارات اور فن لینڈ کے ایئر پورٹس پر بھی کورونا وائرس کے مریضوں کی تلاش کا کام کتوں سے لیا جا رہا ہے۔
حال ہی میں کیے گئے ایک مطالعے سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ تربیت یافتہ کتے 85 سے 100 فی صد درستگی کے ساتھ انفیکشن کا سراغ لگا سکتے ہیں۔


شیئر کریں: