March 18, 2020 at 8:18 pm

تحقیق : سیدہ سفینہ ملک
پاکستان سمیت پوری دنیا کو خوف میں مبتلا کرنے والا کورونا وائرس کے علاج ڈھونڈنے میں پوری دنیا لگ گئی ہے۔چین کی جانب سے مسلسل کوشش کے بعد انکشاف ہوا کہ 6سال قبل جاپان کی جانب سے بنائی گئی دوا کورونا کی موثر علاج ہے۔
اس دوا کا نام فیوی پیراور ہے اور اس کا برانڈ نیم ایوگان ہے۔ اسے 2014 میں جاپان میں فلو، ییلو فیور، ایبولا اور فٹ اینڈ ماؤتھ وغیرہ جیسی بیماریوں کے لیے بنائی گئی ہے۔
چینی حکام کے مطابق ایک جاپانی وائرس کش دوا بظاہر کرونا وائرس کے مریضوں میں موثر ثابت ہوئی ہے۔
اس دوا سے متعلق جاننے کے لئے لنک پر کلک کریں
https://pubchem.ncbi.nlm.nih.gov/compound/Favipiravir
اس دوا کو تیار تو جاپان نے کیا تھا لیکن اس کی تحقیق میں امریکی میڈیسن کی لائبریری یو ایس نیشنل لائبریری آف میڈیشن نے بھی اپنا حصہ ڈالا ہے ۔
چین کی سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کی وزارت کے ایک عہدے دار ژانگ شنمن نے منگل کو نامہ نگاروں کو ایک پریس کانفرنس کے دوران بتایا کہ ’یہ بہت محفوظ ہے اور اس کا علاج واضح طور پر موثر ہے۔‘
https://www.theguardian.com/world/2020/mar/18/japanese-flu-drug-clearly-effective-in-treating-coronavirus-says-china
شینزن میں جن 35 مریضوں کو یہ دوا دی گئی ان میں بظاہر کرونا وائرس کا نتیجہ چار دنوں میں منفی آیا، جب کہ جن 45 مریضوں کو دوا نہیں دی گئی، ان میں 11 دنوں میں ایسا ہوا۔
سرکاری میڈیا کے مطابق ژانگ نے کہا کہ دوا چینی طبی ٹیموں کو تجویز کی گئی تھی اور اسے کرونا وائرس کے علاج میں جلد از جلد شامل کیا جانا چاہیے۔
جاپان کی ہیلتھ لیبر اینڈ ویلفیئر کی وزارت کے ایک عہدیدار کے حوالے سے مقالے میں بتایا گیا کہ ’ہم نے 70 سے 80 لوگوں کو ایوگان دی ہے، لیکن یہ بظاہر اچھے طریقے سے کام نہیں کر رہی اور وائرس کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے۔‘
جاپانی حکام کے مطابق دوا ماں کے پیٹ میں موجود بچوں میں خرابیاں پیدا کر سکتی ہے اور اسے ان خواتین کو نہیں دینا چاہیے جو حاملہ ہوں یا حاملہ ہونے کی کوشش کر رہی ہوں۔
یہ دوا فیوجی فلم کی دوا ساز شاخ تیار کر رہی ہے۔ یہ کمپنی اپنے کیمروں کے لیے زیادہ جانی جاتی ہے۔

Chinese official says Fujifilm’s Favipiravir could treat Covid-19


خبر رساں ادارے رائٹرز کے مطابق اس اعلان کے بعد کمپنی کے حصص میں 15 فیصد کا اضافہ ہوا اور یہ 5207 ین پر ختم ہوئے۔کمپنی نے چینی حکومت کے اعلان پر کوئی تبصرہ نہیں کیا۔

Facebook Comments