ڈاکٹرز ایسوسی ایشن جناح اسپتال کی سندھ حکومت کو دھمکی

شیئر کریں:

ڈاکٹرز ایسوسی ایشن جناح اسپتال کے چیرمین ڈاکٹر شہباز نے کہا ہے کہ 14سال سے ہمیں ترقیاں نہیں دی گئیں اور صرف تین ڈاکٹرز کو ترقیاں دیں اور باقی سب کو نظرانداز کر دیا گیا۔ ہم کورونا میں بھی اپنی ذمدریاں ادا کرتے رہے ہیں۔ جنرل سیکریٹری ڈاکٹر نعیم نے کہا ہم اسپتال میں 14سالوں سے اپنی ڈیوٹیاں احسن طریقے سے انجام دے رہے ہیں ۔ کراچی پریس کلب میں نیوز کانفرنس کے دوران ڈاکٹر نصیر، ڈاکٹر کامران، ڈاکٹر نازش بٹ اور ڈاکٹرارم نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا۔
ڈاکٹر شہباز کا کہناتھا کبھی جناح اسپتال وفاق کے پاس چلا جاتا ہے کبھی سندھ حکومت کے پاس آجاتا ہے جس کی وجہ جناح اسپتال میں ترقیاں نہ ہونے کے باعث پرفیسرز، اسسٹنٹ پروفیسرز اور ڈاکٹر کی شدید کمی ہو چکی ہے۔ اس صورت حال میں مریضوں کو سفر کرنا پڑتا ہے۔ ڈاکٹر نعیم نے کہا ترقیاں نہ ہونے کی وجہ سے کافی ڈاکٹرز نوکریاں چھوڑ کر بیرون ملک جا چکے ہیں۔ جناح اسپتال میں ڈیوٹیاں انجام دینے والے ڈاکٹرز ذہنی ازیت کا شکار ہیں۔ حکومت سندھ فوری طور پر ڈاکٹرزترقیوں کا اعلامیہ جاری کرے۔ ڈاکٹر ارم کا کہناکہ ہمارے پاس تمام اپشن موجود ہیں ہڑتال اور او پی ڈی بند کریں لیکن ہم آخری حد دیکھ رہے ہیں کہ حکومت کیا کرتی ہے۔ ڈاکٹر نازش بٹ نے الزام عائد کیا کہ ہمیں حراساں کیا جارہا ہے۔


شیئر کریں: