پیغمبر اسلام محمد ﷺ کے گستاخانہ خاکے بنانے والا کارٹونسٹ ٹریفک حادثے میں ہلاک

شیئر کریں:

آزادی رائے کے نام پر کروڑوں مسلمانوں دل دکھانے والا اپنے انجام کو پہنچا
پیغمبر اسلام محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے گستاخانہ خاکے بنانے والا کارٹونسٹ ٹریفک حادثے میں ہلاک ہوگیا
سویڈین کا کارٹونسٹ لارس ولکس مبینہ طور پر ایک سادہ پولیس گاڑی میں سفر کر رہا تھا۔
جنوبی سویڈن کے قصبے مارکیریڈ کے قریب اس کی گاڑی ایک ٹرک سے ٹکرا گئی۔

اس حادثے میں کارٹونسٹ کے ساتھ دو پولیس اہلکاروں کی بھی موت ہو گئی ہے۔
75 سالہ لارس ولکس متنازع خاکہ بنانے کے بعد پولیس کی حفاظت میں رہ رہا تھا۔
سویڈن کی حکومت کو خدشہ تھا کہ لارس ولکس پر حملہ ہوسکتا ہے اور اس کی جان کو خطرہ لاحق ہے۔
پولیس کا کہنا ہے کہ یہ ابھی تک واضح نہیں ہے کہ کار اور ٹرک کی ٹکر کیسے ہوئی۔
تاہم ابتدائی طور پر ایسا کچھ نہیں ہے کہ اس میں کسی کے ملوث ہونے کی بات سامنے آئی ہو۔
2007 میں شائع ہونے والے کارٹون نے دنیا بھر کے بہت سے مسلمانوں کے جذبات کو مجروح کیا تھا۔
ان کارٹون کی اشاعت سے مسلمانوں میں شدید غم و غصہ پیدا ہوا تھا۔
دنیا بھر میں مسلمانوں نے سویڈن کے خلاف شدید احتجاج کیا تھا۔
اس وقت کے سویڈش وزیر اعظم نے صورتحال کو سنبھالنے کی کوشش میں 22 مسلم ممالک کے سفیروں سے ملاقات کی تھی۔
اس کی اشاعت کے بعد ہی عراق میں القاعدہ نے کارٹونسٹ کے سر کی ایک لاکھ ڈالر قیمت پیش کی تھی۔


شیئر کریں: