پاکستان کو براعظم افریقہ کے 54 ممالک میں سرمایہ کاری کی دعوت

شیئر کریں:

انسٹی ٹیوٹ آف اسٹریٹجک اسٹڈیز اسلام آباد (آئی ایس ایس آئی) کے سنٹر برائے افغانستان ، مشرق وسطی
اور افریقہ (کیمیا) نے انگیج افریقہ آرگنائزیشن کی بانی اور چیئر ویمن فچیما ایلیس حسانے پیرائو کی میزبانی
کی۔ ڈائریکٹر کیمیا آمنہ خان اور ٹیم کریمیا نے انٹرایکٹو سیشن کیا۔

پیریسو نے کہا کہ افریقی براعظم کے عوام پاکستان پہنچنے کے لئے بے چین ہیں تاہم پاکستان اور افریقی
ممالک کے درمیان زبان ایک بڑی رکاوٹ ہے۔ افریقی براعظم کی اہمیت کے بارے میں بات کرتے ہوئے
انہوں نے کہا کہ افریقہ تجارت اور سرمایہ کاری کے لامتناہی مواقع پیش کرتا ہے یہ 54 ممالک میں
پھیلی متنوع آبادیوں کی ایک وسیع مارکیٹ ہے۔

پیرائو نے بتایا کہ براعظم میں ہندوستان اور چین کی بہت مضبوط موجودگی ہے لیکن پاکستان اس سلسلے
میں پیچھے ہے۔ انگیج افریقہ پالیسی اس سلسلے میں بہت خوش آئند ہے اس سے پاکستان اور افریقی
ممالک کے مابین دوطرفہ تعلقات کو بڑھانے میں مدد ملے گی۔ ہمارے روابط بڑھانے کے لئے زبان کی
رکاوٹ کو دور کرنا ہوگا۔


انہوں نے فرانسیسی زبان کے تدریسی پروگرام کے بارے میں بھی بات کی جو مستقبل قریب میں پاکستانی
اور افریقی عوام کے مابین مواصلاتی فاصلے کو دور کرنے میں مدد گار ثابت ہو سکتی ہے۔

آمنہ خان نے اینگیج افریقہ پالیسی کے متعدد پہلوؤں کا خاکہ پیش کیا جو وزیر اعظم عمران خان نے پیش
کیا تھا انہوں نے افریقی شہریوں کے ساتھ پاکستان میں قربت سے کام کرنے کی خواہش کا اظہار کیا تھا۔

انہوں نے پاکستانی اور افریقی عوام کے مابین بڑھتے ہوئے باہمی رابطوں سے متعلق متعدد نظریات پر تبادلہ
خیال کرنے کے ساتھ ساتھ تاجروں کے مابین سرمایہ کاری اور مواصلات کی حوصلہ افزائی کے ذریعے تجارتی
مواقع پیدا کرنے کے بارے میں بھی بات کی۔ دونوں فریقوں نے پاکستان اور افریقہ کے مابین ہر سطح پر پائیدار
روابط کے قیام اور جاری تعاون کے لئے جدوجہد کرنے کا وعدہ کیا۔

اس سے پہلے آمنہ خان نے انسٹی ٹیوٹ پہنچنے پر ان کا استقبال کیا اور آئی ایس ایس آئی اور کیمیا کی
سرگرمیوں کے بارے میں بریفنگ دی۔


شیئر کریں: