پاکستان میں فرنٹ لائن ورکرز کی ویکسنیشن کا آغاز عوام کو مزید انتظار کرنا ہوگا

شیئر کریں:

پاکستان میں فرنٹ لائن ورکرز کو کورونا ویکسین لگانے کا کام تو شروع ہو گیا تاہم عوام کو ابھی
مزید انتظار کرنا پڑے گا۔ دنیا کے 66 ملکوں میں عوام کو کورونا ویکسین لگانے کا کام شروع ہو چکا ہے۔

نئی امریکی انتظامیہ نے عوام کے لیے مزید 20 کروڑ ڈوزز خرید لیں اور اسرائیل کی 57 فیصد سے زائد
آبادی کو پہلی ڈوز لگ گئی۔

رپورٹ کے مطابق یکم فروری تک دنیا بھر میں 10 کروڑ 13 لاکھ سے زائد افراد کو کورونا ویکسین لگ چکی
ہے۔ 66 ملکوں میں ویکسینیشن کا کام جاری ہے۔ امریکا میں 3 کروڑ 22 لاکھ 20 ہزار افراد اور چین میں
2 کروڑ 40 لاکھ افراد کو ویکسین کی پہلی ڈوز لگائی جا چکی ہیں۔ تاہم آبادی کے تناسب سے ویکسینیشن
میں اسرائیل سب سے آگے ہے۔ اب تک اسرئیل کی 57.6 فیصد آبادی کو کم سے کم ایک ڈوز لگ چکی ہے۔

یو اے ای کے 34.8 فیصد، برطانیہ کے 15 فیصد، اسکاٹ لینڈ اور بحرین کے 10 فیصد شہریوں کو کورونا
ویکسین لگ گئی۔ آبادی کے تناسب سے امریکا کی اب تک 9.6 فیصد آبادی کو ویکسین کی پہلی خوراک
مل سکی تاہم جو بائڈن انتظامیہ نے کرونا ویکسین کی مزید 20 کروڑ ڈوز خرید لی اور اسی سال گرمیوں
کے اختتام تک پوری آبادی کی ویکسینیشن مکمل کرنے کا اعلان کیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق دنیا میں مجموعی طور پر اب تک 12 ارب 70 کروڑ ڈوزز کے سودے ہو گئے۔ سب سے زیادہ
ایک ارب 58 کروڑ 50 لاکھ ڈوزز یورپی یونین نے خریدی ہیں تاہم آبادی کے تناسب سے دیکھا گائے تو کنیڈا
اپنی پوری آبادی کو 5 مرتبہ ویکسین لگانے کے برابر ڈوزز خرید چکا ہے۔

عالمی ادارہ صحت اور یورپین کمیشن کی طرف سے غریب ملکوں کو ویکسین کی فراہمی کے لیے بنائی گئی
تنظیم کوویکس نے اب تک مجموعی طور پر ویکسین کی 1 ارب 11 کروڑ ڈوز خریدی ہیں۔ ان میں سے پاکستان
کو بھی ایک کروڑ 70 لاکھ دوزز ملیں گی۔


شیئر کریں: