پاکستان ایران تعلقات میں کشیدگی ختم کرنے کا فیصلہ

ایران میں پنجاب کے 9 مزور قتل 3 زخمی

پاکستان ایران تعلقات میں کشیدگی ختم کرنے کا فیصلہ کر لیا گیا. نگران وفاقی کابینہ نے ایران کے ساتھ سفارتی
تعلقات بحال کرنے کی قومی سلامتی کمیٹی کی سفارش کی توثیق کر دی ہے۔ نگران وزیراعظم انوار الحق کاکڑ نے
کہا ہے کہ پاکستان قانون کی پاسداری کرنے والا اور امن پسند ملک ہے. تمام ممالک بالخصوص ہمسایہ ممالک
کے ساتھ دوستانہ اور تعاون پر مبنی تعلقات کا خواہاں ہے.
پاکستان اور ایران کے مفاد میں ہے کہ وہ اپنے تعلقات کو بحال کرنے کیلئے اقدامات کریں جیسے 16 جنوری سے
پہلے تھے۔ پاکستان ایران کی جانب سے تمام مثبت اقدامات کا خیرمقدم کرے گا۔
اعلامیہ کے مطابق وفاقی کابینہ اجلاس میں وزارت خارجہ نے 16 جنوری 2024 کو پاکستان پر ایرانی حملے سے پیدا
ہونے والی صورت حال سے آگاہ کیا۔وفاقی کابینہ کے اجلاس میں حملے کی تفصیلات کے ساتھ ساتھ پاکستان
کے ردعمل کا بھی جائزہ لیا گیا۔ کابینہ نے افواج پاکستان کی اعلیٰ پیشہ وارانہ مہارت کی تعریف کی جس نے پاکستان
کی خودمختاری کی خلاف ورزی کا جواب دیا اور اس سلسلے میں پوری حکومتی مشینری نے متحد ہو کر کام کیا۔
وزیراعظم انوار الحق کاکڑ نے کہا کہ پاکستان قانون کی پاسداری کرنے والا اور امن پسند ملک ہے اور وہ تمام ممالک
باالخصوص اپنے ہمسایہ ممالک کے ساتھ دوستانہ اور تعاون پر مبنی تعلقات کا خواہاں ہے. پاکستان اور ایران دو
برادر ممالک ہیں اور ان کے درمیان تاریخی طور پر برادرانہ اور تعاون پر مبنی تعلقات ہیں جن میں احترام اور محبت
ہے۔ یہ دونوں ممالک کے مفاد میں ہے کہ وہ تعلقات کو بحال کرنے کے لئے اقدامات کریں جو 16 جنوری
2024 سے پہلے تھے.