پاکستانیوں کو مہنگی خوراک بیچ کے کروڑوں ڈالر بیرون ملک منتقل

شیئر کریں:

پاکستان میں بیرونی سرمایہ کاری تو کم ہو گئی لیکن غیر ملکیوں کا منافع کم نہیں ہوا۔ غیر ملکی
سرمایہ کاروں نے چھ ماہ میں 89 کروڑ ڈالر سے زیادہ منافع باہر بھجوایا۔ منافع کی رقم اس دوران ہونے
والی مجموعی نئی غیر ملکی سرمایہ کاری سے بھی 38 کروڑ ڈالر زیادہ ہے۔

اسٹیٹ بینک کے مطابق مالی سال کے پہلے چھ ماہ کے دوران غیر ملکی سرمایہ کاروں کی طرف سے منافع
کی مد میں مجموعی طور پر 89 کروڑ 23 لاکھ ڈالر بیرون ملک بھجوائے گئے۔ اس دوران پاکستان میں ہونے
والی غیر ملکی سرمایہ کاری کا مجموعی حجم 51 کروڑ 45 لاکھ ڈالر تھا۔ رواں مالی سال جولائی سے
دسمبر کے اختتام تک 84 کروڑ 1 لاکھ ڈالر صنعتی شعبے میں سرمایہ کاری سے حاصل ہونے والے منافح
کی مد میں باہر گئے۔ 5 کروڑ 22 لاکھ ڈالر اسٹاک مارکیٹ میں کاروبار کرنے والے غیر ملکیوں نے
باہر بھجوائے۔

رپورٹ کے مطابق سب سے زیادہ منافع پاکستان میں خوراک کا کاروبار کرنے والوں نے باہر بھجوایا۔ 6 ماہ
میں خوراک کا کاروبار کرنے والوں کی طرف سے 17 کروڑ 29 لاکھ ڈالر باہر بھجوائے گئے جو گزشتہ سال
اس عرصے سے 214 فیصد زیادہ ہیں۔ غیر ملکی بینکوں اور مالیاتی اداروں نے مجموعی طور پر 13 کروڑ
35 لاکھ ڈالر اور کمیونیکیشن سیکٹر والوں نے 11 کروڑ 95 لاکھ ڈالر باہر بھیجے۔ رپورٹ کے مطابق منافع
کی سب سے زیادہ رقم 31 کروڑ 80 لاکھ ڈالر برطانیہ بھجوائی گئی اور امریکیوں نے 15 کروڑ 26 لاکھ
ڈالر باہر بھجوائے۔


شیئر کریں: