وہ سال جب دنیا میں سورج نہیں نکلا اور 65 ہزار لوگ ہلاک ہوئے

شیئر کریں:

انسان نے زمین پر انتہائی ناساز حالات اور مختلف بیماریوں کا سامنا کیا
مشکل ترین حالات کے باوجود انسان آج بھی کامیابی سے اپنی افزائش نسل جاری رکھے ہوئے ہیں
انسان نے تاریخ کا بدترین سال بھی دیکھا اس سال سورج نے اپنی شکل نہ دیکھائی
پورا سال سورج نہ نکلنے کی وجہ سے دنیا میں سخت سردی کا راج رہا

گرم موسم نہ ہونے کی وجہ سے فصلیں تباہ ہوئیں اور انسانیت کو بدترین قحط سالی کا سامنا کرنا پڑا
یہ بات زیادہ پرانی نہیں 1816 سے1819 تک انسان نے ایسے حالات کا سامنا کیا جس کا اس کو تجربہ نہیں تھا
انسان کے تصور میں بھی نہیں تھا کہ وہ ایسے سرد موسم میں داخل ہوں گے کہ یہ موسم ختم ہیں ہوگا۔
اس تاریخی سال میں یورپ، آئرلینڈ،اٹلی، سوئٹزر لینڈ اور اسکاٹ لینڈ کے لوگ بری طرح متاثر ہوئے
ان ممالک میں باقی دنیا کی نسبت پہلے ہی سردی زیادہ ہوتی تھی

لیکن 1819 میں سرد موسم کا آغاز ہوا اور سورج غروب ہوگیا
لوگ سورج کے طلوع ہونے کا انتظار کرتے رہے
خوراک ختم ہوگئی، فصلیں تباہ ہوگئی لیکن سورج نے اپنا چہرہ نہیں دیکھایا
پورا سال سورج نہ نکلنے کی وجہ سے ان ممالک میں شدید سردی کا راج رہا
شدید سرد موسم اور خوراک کی کمی کی وجہ سے لاکھوں جانور ہلاک ہوگئے
صرف یورپ، آئرلینڈ،اٹلی، سوئٹزر لینڈ اور اسکاٹ لینڈ میں 65 ہزار
لوگ خوراک کی کمی اور انتہائی سرد موسم کی وجہ ہلاک ہوگئے
اس تباہ کن صورت سے نکلنے میں یورپ کے ان ممالک کو کئی سال لگے


شیئر کریں: