منرو لائٹ سے کورونا کا مریض 10 دن میں صحت یاب ہو گا ڈاکٹر کا دعوی

شیئر کریں:

پاکستانی نژاد روسی سائنسدان ڈاکٹرجان عالم نے کورونا کی دوا تیار کرلی ہے۔ منرو لائٹ کے استعمال
سے کورونا کا مریض 10 دن میں مکمل صحت یاب ہو سکتا ہے۔
ڈاکٹر جان عالم نے دعویٰ کیا ہے کہ انہوں نے کورونا کی دوا تیار کرلی ہے جو نینو ٹیکنالوجی پر مبنی
منرل سے بنی دوا ہے اور یہ دوا پانچویں جنریشن کی جدید تحقیق پر مبنی دوا ہے۔ منرو لائٹ دوا کے
کوئی مضر اثرات نہیں انسانیت کے لیے نہایت مفید ہے جس کو ایک دن کے بچے کو بھی استعمال
کروائی جا سکتی ہے۔

کورونا کا علاج تلاش کرنے پر پاکستانی ڈاکٹر دنیا کے بہترین میڈیکل سائنسدان کے ایوارڈ کیلیے نامزد

منرو لائٹ دوا کے استعمال سے مریض نوبلائزنگ کے 10 دن میں مکمل صحت یاب ہو سکتا ہے حتی
کہ وینٹی لیٹرز والے مریض بھی اس سے فوراً صحت یاب ہو سکتے ہیں۔
ڈاکٹر جان عالم نے کہا اس دوا کو چہرے یا جسم کے دوسرے حصوں پر اسپرے کیا جائے تو کورونا وائرس
سے بچا جا سکتا ہے۔ ایک دفعہ کا اسپرے آپ کو تین سے چار گھنٹے مکمل طور پر وائرس سے بچا جا سکتا ہے۔
ڈاکٹر جان عالم کے مطابق اُنہوں نے یہ دوا 7 سال قبل بنائی تھی اور 2017 میں روس میں رجسٹرڈ ہوئی۔
انہوں نے دیگر ادویات بھی ایجاد کی ہیں جن میں کینسر کے خلاف موثر دوا بھی شامل ہے۔

پریس کلب اسلام آباد میں نیوز کانفرنس کے دوران صحافیوں کو دوا سے متعلق بتایا کہ طب کے میدان
میں گراں قدر خدمات پر روس کی حکومت انہیں 3 اعلیٰ ملکی ایوارڈ سے بھی نواز چکی ہے۔
وہ 2018’2019 اور 2020 کے دنیا کے بہترین میڈیکل سائنس دان ہونے كا اعزاز بھی حاصل کر چکے ہیں۔
اُنہوں نے دعویٰ کیا وہ دنیا کے پہلے سائنس دان ہیں جس نے کورونا کی دوا تیار کی۔ یہ دوا حکومت
پاکستان سے بھی رجسٹرڈ ہو چکی ہے۔

اس موقع پر سید عبدالرشید عباسی نے بھی بتایا کہ وہ کورونا کے مریض تھے اور اس دوا کے استعمال سے
مکمل صحت یاب ہوئے۔ ڈاکٹر جان عالم نے حکومت پاکستان سے درخواست کی ہے کہ یہ دوا پاکستان
کورونا مریضوں کو بچانے کے لیے یہ دوا استمال کرنے کی اجازت دے میں ہر قسم کے تعاون کے لیے تیار ہوں۔
حیرت اس بات کی ہے کہ اگر ڈاکٹر جان عالم نے اتنی گراں قدر خدمات انجام دی ہیں‌ تو پھر کوئی
حکومتی شخصیت ان کے ساتھ کیوں‌ موجود نہیں تھی؟
اسی سوال نے سوچنے والوں‌ کو اپنا دماغ‌ چلانے پر مجبور کر دیا ہے کہ یہ ایک حقیقت ہے یا پھر
افسانہ؟


شیئر کریں: