ملک ریاض کی بیٹیوں کا ماڈل عظمی خان پر گھر میں گھس کر تشدد، کل پریس کانفرنس کا اعلان

شیئر کریں:

پاکستان کے پراپرٹی آئی کن ملک ریاض کی طرح ان کی بیٹیاں بھی انتہائی پاور فل نکلیں۔
لاہور میں ماڈل اور ادکارہ عظمی خان کے گھر گھس کر ان پر تشدد کیا اور قتل کی دھمکیاں دیں۔

اداکارہ عظمی خان کے مطابق یہ واقع گزشتہ رات پیش آیا جب ملک ریاض کی بیٹیاں امبر ملک اور پشمینہ ملک نے ان کے گھر میں دھاوا بول دیا۔

ان کے ساتھ ان کے متعدد باڈی گارڈز بھی تھے جنہوں نے عظمی خان اور ان کی بہن کو جسمانی طور پر ہراساں کیا ۔
یہی نہیں تشدد کرکے زخمی کیا اور ان پر پیٹرول بھی پھینکا۔
یہ سب تفصیل عظمی خان نے اپنے ٹوئیٹر پیغام میں بتائی ہیں۔

عظمی خان مزید تفصیلات کل لاہور پریس کلب میں پریس کانفرنس کے دوران بتائیں گی۔
عظمی خان اور ان کی بہن کی ایک ویڈیو بھی سوشل مئڈیا پر وائرل ہوئی ہے جس میں عظمی خان کے مطابق ملک ریاض کی بیٹیاں ان کو دھمکیاں دے رہی ہیں اور پوچھ رہی ہیں کہ ان کا عثمان ملک سے کیا تعلق ہے۔

خود ہی ان کو کہتی ہیں تم ملتی ہو عثمان سے ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ آنٹی کہنے پر ملک ریاض کی بیٹی اس پر مزید غصہ ہوئی اور کہا کہ میں تمھیں انٹی نظر آتی ہوں۔
اس سب واقع کے بعد عظمی خان نے پولیس اسٹیشن میں ملک ریاض کی بیٹیوں کے خلاف ایف آئی آر کے لئے درخواست بھی دے دی ہے۔
عظمی خان نے اپنے مداحوں سے درخواست کی ہے کہ ان کا ساتھ دیں۔
ان کا کہنا ہے کہ وہ ریئل اسٹیٹ جیسے کاروبار کی مالک نہیں ہیں لیکن عزت کا معاملہ ہے جس کی وجہ سے اب ہم خاموش نہیں بیٹھے گے جینا مرنا اللہ کے ہاتھ میں ہے۔
حیرت کی بات یہ ہے پاکستان کے پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا نے اس خبر کا مکمل طور پر بائی کاٹ کر رکھا ہے۔
حالانکہ ملک ریاض نے اپنا نیوز چینل بد کر کے سیکڑوں صحافیوں کو بھی بیروزگار کیا اس کے باوجود کوئی آواز نہیں اٹھا رہا ہے۔
یہ وہ ہی میڈیا ہے کو کتے کے کاٹنے کی خبر بھی بریکنگ نیوز کے طور پر چلاتا ہے لیکن بااثر افراد کے سامنے بے بس دیکھائی دیتا ہے۔
اس سے پہلے نھی بحریہ ٹاون لاہور میں کورونا وائرس کے کیسز سامنے آنے اور بحریہ ٹاون کا علاقہ سیل ہونے کے باوجود میڈیا پر خبر نظر نہیں آئی۔
سینیر اینکر پرسن جیسمین منظور نے بھی واقعہ کی شدید مزمت کرتے ہوئے ملک ریاض کی بیٹیوں کے خلاف مقدمہ درج کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

ملک ریاض نے سماجی رابطہ کی مقبول سائٹ ٹوئیٹر پر کہا ہے کہ وہ ہتک عزت کا دعوی دائر کریں گے۔


شیئر کریں: