لاء کا پیپر امتحانی سینٹر سے باہر دیتے ہوئے ایم پی اے کا امیدوار گرفتار

شیئر کریں:

وزیرآباد سے ضمیر کاظمی
امتحانی سینٹر سے باہر پیپر حل کرنے والے طالب علم کو خفیہ ادارے نے میڈیا کی نشاندہی اور پنجاب پولیس کی معاونت سے رنگے ہاتھوں پکڑ لیا۔
ملزم کے قبضہ سے سوالنامہ، جوابی شیٹ اور نقل مارنے کے لیے استعمال ککی جانے والی تمام کتابیں قبضہ میں لے لی گئیں۔
ملزم اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کے وزیرآباد میں بنائے گئے لاء کے امتحانات کے سینٹر کرسچن ہائی اسکول سے پیپر لے کر سینٹر سے آٹھ کلو میٹر دور پیپر حل کرتے ہوئے پکڑا گیا۔ پکڑا جانے والا ملزم رانا وقاص وزیرآباد کے حلقہ پی پی 51 سے ضمنی انتخاب میں ایم پی اے کا امیدوار تھا۔
وزیرآباد گورنمنٹ کرسچن ہائی اسکول جسے اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کی جانب سے قانون کے پیپرز کے لیے سینٹر بنایا گیا ہے وہاں طالب علم وکلاء بننے کے لیے پیپرز دے رہے ہیں۔ اس سینٹر سے باہر عملہ کی مبینہ ملی بھگت سے پیپرز حل کیے جا رہے تھے۔ گذشتہ روز اسی سینٹر کا رول نمبر2930 جس کا نام وقاص معلوم ہوا ہے سینٹر سے 8کلومیٹر دور پیپر حل کر رہا تھا۔ جسے میڈیا کی نشاندہی پر خفیہ ادارے اور پنجاب پولیس نے پیپر حل کرتے ہوئے پکڑ لیا۔

ملزم طالب علم کے قبضہ سے سوالیہ پیپر،جوابی شیٹ اور نقل مارنے کے لیے استعمال کی جانے والی کتب بھی قبضہ میں لے لی گئیں ملزم کو پولیس تھانہ صدر نے اپنی حفاظت میں لے لیا لیکن 48گھنٹہ گذرنے کے باوجود بھی ملزم کے خلاف کوئی کاروائی عمل میں نہ لائی گئی۔ سینٹر کے سپرنٹنڈنٹ اور ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ نے پیپر سینٹر سے باہر جانے اور کوئی بھی موقف دینے سے انکار کر دیا۔ ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ سینٹر میں نقل مارنے کی انتہائی آسانی ہے اور پیپر نقل مار کر بآسانی حل کیے جاتے ہیں۔ مبینہ اطلاع کے مطابق چار روز قبل سینٹر کی انسپکشن کرنے کے لیے آنے والی ٹیم نے 40کے قریب نقل مارنے والوں کو پکڑا لیکن مبینہ طور پر عملہ کی جانب سے ان کا منہ میٹھا کروا کر انہیں بھی چلتا کر دیا گیا۔
سینٹر کے عملہ نے اپنے آپ کو محفوظ بنانے کے لیے کمال ہوشیاری سے پکڑے جانے والے طالب علم کے خلاف تھانہ سٹی میں سینٹر سے پیپر چوری کیے جانے کا استغاثہ دے کر اپنی جان چھڑوا لی خدشہ ظاہر کیا گیا ہے کہ سینٹر کا عملہ مکمل ساتھ شامل ہے اور ملی بھگت سے پیپرز حل کروائے جاتے ہیں اور نقول ماری جاتی ہیں۔ محکمہ تعلیم سے وابستہ ایک سینئر ٹیچر کا کہنا ہے کہ پکڑے جانے والے طالب علم کے دیگر پیپرز جو اس نے حل کیے ان کو سامنے لایا جائے تو عملہ کی ملی بھگت واضع طور پر پکڑی جا سکتی ہے۔ نقل مارے جانے اور سینٹر کے باہر اس پیپر حل کیے جانے کا واقعہ 48گھنٹے گذر جانے کے باوجود بھی تھانہ سٹی نے روایتی سست روی دکھائی اور ملزم کے خلاف کوئی مقدمہ درج نہ کیا ہے۔ ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ ملزم با اثر ہے یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ پکڑا جانے والا ملزم رانا وقاص وزیرآباد کے حلقہ پی پی 51 سے ضمنی انتخاب میں بھی حصہ لے چکا ہے اور الیکشن ہارا ہوا ہے۔


شیئر کریں: