طلبا کو لوٹنے والی سینکڑوں یونیورسٹیوں کے کیمپس غیر قانونی قرار

شیئر کریں:

پرائیویٹ یونیورسٹیوں میں زیر تعلیم ہزاروں طلبا کا مستقبل داؤ پر لگ گیا۔

ہائر ایجوکیشن کمیشن نے متعدد پرائیویٹ یونیورسٹیز کے سب کیمپسز کو غیر قانونی قرار دیا۔

یونیورسٹی آف سینٹرل پنجاب  کے بہاولپور، فیصل آباد گوجرانولہ گجرات راولپنڈی سرگودھا اور سیالکوٹ کے کیمپس کو غیر قانونی قرار دے دیے گئے۔

نیشنل کالج آف بزنس ایڈمنسٹرشن لاہور کے بہاولپور گجرات رحیم یار خان اور سیالکوٹ کے کیمپس بھی غیر قانونی  قرار دے دیے گئے۔

سپئیریر کالج لاہور کے بہاولپور ، فیصل آباد خان پور سرگودھا میں موجود کیمپس غیر قانونی ہیں۔

یونیورسٹی آف لاہور کے گجرات ، اسلام آباد اور پاکپتن کے کیمپس بھی غیر قانونی قرار دے دیے گئے۔

قرشی یونیورسٹی لاہور کا مرید کے میں موجود کیمپیس اور ہجویری یونیورسٹی لاہور کا شیخوپورہ میں موجود کیمپس بھی غیر قانونی قرار دے دیا گیا۔


شیئر کریں: