ریاستی جبر کے باوجود جامعہ اسلامیہ نے معیار تعلیم میں تمام بھارتی یونیورسٹیز کو پیچھے چھوڑ دیا

شیئر کریں:

بھارتی حکومت نے چالیس یونیورسٹیز کی رینکنگ جاری کردی۔
جامعہ ملیہ اسلامیہ یونیورسٹی دہلی نے نوے فیصد نمبر حاصل کرکے دیگر بھارتی یونیورسٹیز کو پیچھے چھوڑ دیا۔

جامعہ اسلامیہ وہی یونیورسٹی ہے جس کے طلبا متنازع بھارتی شہریت کے قوانین کے خلاف سراپا احتجاج تھے۔

بی جے پی حکومت کی طرف سے نہ صرف جامعہ یونیورسٹی پر تنقید کی جارہی تھی
بلکہ بھارتی پولیس نے جامعہ کے طلبا شدید جسمانی تشدد کا نشانہ بنایا تھا۔
میڈیکل رپورٹس میں سامنے آیا تھا کہ بھارتی پولیس نے جامعہ کے طلبا اور طالبات کے جنسی اعضا کو بھی تشدد کا نشانہ بنایا تھا۔
اروناچل پردیش کی راجیو گاندھی یونیورسٹی لسٹ میں دوسرے
اور جواہر لعل نہرو یونیورسٹی تیسرے نمبر پر رہی۔
لسٹ میں چھو تھے نمبر پر بھی مسلم یونیورسٹی علی گڑھ مسلم یونیورسٹی ہے۔
ماہرین تعلیم کا کہنا ہے کہ یونیورسٹیز کی رینکنگ معیار تعلیم، ریسرچ اور دیگر عوامل کی بنیاد پر جاری کی جاتی ہے۔
بھارتی حکومت کے جامعہ کے طلبا کو دیوار سے لگانے کی کوشش کی گئی
اور ریاستی جبر کے باوجود طلبا نے معیار تعلیم اور اپنی محنت کی وجہ سے بھارت بھر میں اپنا لوہا منوایا۔


شیئر کریں: