حضرت علی ؑ کے یوم شہادت پر کراچی لاہور میں جلوس برآمد

شیئر کریں:

پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ والیہ وسلم کے داماد اور شیر خدا حضرت علی علیہ السلام کا یومِ شہادت ملک بھر میں منایا جارہا ہے۔

کورونا وائرس کی پھیلتی ہوئی وبا کی وجہ سے مجالس اور جلوس احتیاطی تدابیر کے ساتھ بپا کیے جارہے ہیں۔
کراچی کی مرکزی مجلس نشتر پارک میں صبح سات بجے ہوئی، مجلس سے علامہ شہنشاہ نقوی نے خطاب کیا۔
علامہ شہنشاہ نقوی نے حضرت علی کی زندگی کی پہلو اجاگر کیے اور کہا حضرت علی کی سیرت پر چل کر
ہی اسلام کی اصل تعلیمات کو سمجھا جا سکتا ہے۔
کراچی میں یوم علی کا جلوس صبح 7 بجے برآمد ہوگا
حضرت علی نے اپنی جان کی قربانی دے کر اسلام کو جاویدانی زندگی بخشی۔
مجلس کے اختتام پر شبیہہ تابوت برآمد ہوا، عزادار حکومت کے جاری کردہ ایس او پیز کے تحت پرسہ داری کر رہے ہیں۔
عزاداروں نے ایس او پیز کے تحت باہمی فاصلے سمیت ماسک اور سینیٹائیزر کا استعمال یقینی بنا رہے ہیں۔
اور بچے جلوس میں شریک نہیں ہوئے، جلوس مقررہ راستوں سے ہوئے نماز جمعہ سے قبل حسینیہ ایرانیان کھارادر پر مکمل ہو گا۔
حضرت علی علیہ اسلام پیغمبر اسلام حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے چچا زاد بھائی اور داماد ہیں۔

آپ نےآغوش رسالت میں آنکھ کھولنے سے لے کر وصال رسول تک نبی کریم کے زیر سائیہ رہے۔
نبی کریم صلی اللہ علیہ والیہ وسلم نے فرمایا کہ” میں علم کا شہرہھوں تو علی اس کا دروازہ ہیں”۔
حضرت علی علیہ اسلام اسلام کی راہ میں وقت شہادت تک کفار سے برسرِپیکار رہے اور دین اسلام کی
بے مثال تبلیغ کرتے ہوئے جام شہادت نوش فرمایا۔

آج انہی کی یاد منائی جارہی ہے، کورونا کی وبا کے باعث انتہائی احتیاط کے ساتھ سوگواری کا سلسلہ جاری ہے۔
لاہور میں بھی مرکزی جلوس مبارک حویلی سے برآمد ہوا ہے اور مقررہ راستوں سے
ہوتا ہوا سہ پہر تین بجے سے پہلے کربلا گامے شاہ پر مکمل ہوا۔


شیئر کریں: