جھنگ میں چاول فصل کی کٹائی لیکن حکومت پالیسی واضح نہ کرسکی

شیئر کریں:

جھنگ سے ابوتراب ترابی

پنجاب کے مختلف علاقوں کی طرح جھنگ میں بھی چاول کی فصل کی کٹائی شروع ہوچکی ہے
تاہم بیوپاریوں کی جانب سے مناسب دام نہ ملنے پر کاشت کار شدید پریشان ہیں۔
جھنگ میں چاول کی فصل پک کر تیار ہو چکی ہے بیشتر علاقوں میں کٹائی کے بعد تھریشنگ
کا عمل بھی شروع ہو گیا ہے۔

چاول کی خریداری کے لیے حکومتی پالیسی واضح نہ ہونے پر کاشتکار شدید پریشانی کا شکار ہیں۔
کاشتکار کہتے ہیں بیوپاری سستے دام چاول خرید رہے ہیں مگر کوئی پوچھنے والا نہیں۔
چاول کی کاشت پر اخراجات تو زیادہ ہیں مگر انہیں ریٹ کم دیا جا رہا ہے۔
مارکیٹ میں بیوپاری حضرات کی جانب سے کائنات چاول کی فی من قیمت 1700سے 18سو
اور سپر چاول کی قیمت 21سو سے 22سو روپے تک مقرر کی گئی ہے۔
دھان کی فی ایکڑ کاشت پر 35ہزار سے 40ہزار روپے تک اخراجات آتے ہیں۔
کاشتکاروں کا کہنا ہے کہ حکومت چاول کی خریداری کے لیے حکمت عملی مرتب کر کے
بیوپاری کو مناسب ریٹ دینے کا پابند بنائے تاکہ ان کا معاشی استحصال نہ ہو سکے۔


شیئر کریں: