جنرل باجوہ کی میٹھی باتوں میں آگیا تھا، عمران خان کا اعتراف

جنرل باجوہ کی میٹھی باتوں میں آگیا تھا، عمران خان کا اعتراف

بانی چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان نے اڈیالہ جیل میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے شکوہ کیا ہے
کہ ہماری حکومت لانے سے پہلے ہی ہمیں کمزور کردیا گیا تھا. ہمیں کمزور کرکے ہمیں کنٹرول کیا گیا.
میری سب سے بڑی غلطی یہ تھی کہ ہم نے وہ حکومت تسلیم کی، ہمیں وہ حکومت لینی ہی نہیں چاہیے تھی.
اگر حکومت لے لی تھی تو فورا الیکشن کروانے چاہیے تھے. اس وقت میں جنرل باجوہ کی میٹھی باتوں میں آگیا . اس
بات بھی ایک “ہنگ پارلیمنٹ” بنائی جارہی ہے.
اس بار بھی ریلو کٹوں کی کچھڑی بنائی جارہی ہے. ،کمزور حکومت بنائی گئی تو پارلیمان کو مضبوط کرنے کے لیے اپوزیشن
میں بیٹھنا پسند کریں گے. میں مزاکرات کے لیے تیار ہوں، سیاسی آدمی ہمیشہ مزاکرات کرتا ہے. علی ظفر، فواد
چوہدری اور شاہ محمود قریشی پر مبنی 3 رکنی سیاسی کمیٹی نے پی ڈی ایم سے مذاکرات کی بھرپور کوشش کی.
عمران خان نے کہا اس وقت انتخابات کی تاریخ پر ڈیڈلاک ہماری طرف سے نہیں بلکہ پی ڈی ایم کی طرف سے تھا.
پی ڈی ایم نے کہا چیف جسٹس عمر عطا بندیال کے ہوتے ہوئے الیکشن میں نہیں جاسکتے. پی ڈی ایم عمر عطا
بندیال کے ہوتے ہوئے انتخابات نہیں چاہتی تھی. گزشتہ روز اعظم خان نے بلکل سچ بولا. اعظم خان کا سافٹ
ویئر اپڈیٹ کرنے کی کوشش کی گئی. سائفر نیشنل سیکیورٹی کمیٹی اور کابینہ میں رکھا گیا .