جامعہ کراچی میں ڈاکٹر مصطفی شمیل میموریل سیمینار

شیئر کریں:

آفس آف ریسرچ انوویشن اینڈ کمرشلائزیشن جامعہ کراچی کے تحت ‘سمندری کائی کے وسائل اور بلیو ویلتھ کے لیے بہترین مواقع’ کے موضوع پر سیمینار منعقد کیا گیا۔
پاکستان میری ٹائم سیکیورٹی ایجنسی کے کمانڈر فیصل صادق پروگرام کے مہمان خصوصی تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کی کوسٹل لائن بہت ذرخیز ہے۔ یہاں موجود کائی کو کارآمد بنانے کے لیے طلباء اور اساتذہ کی تحقیق سود مند ثابت ہوسکتی ہے۔ جامعہ کراچی کے وائس چانسلر ڈاکٹر خالد محمود عراقی نے بلیو ویلتھ کے لیے آفس آف ریسرچ انوویشن اینڈ کمرشلائزیشن کے کردار کو سراہتے ہوئے کہا جامعہ کراچی تحقیق کے شعبہ میں نمایاں مقام رکھتی ہے۔ یہ تحقیق ملکی مفاد میں ہے۔
میرین سائنسز اور نباتیات کے شعبہ جات سے وابستہ مینجر آفس آف ریسرچ انویشن اینڈ کمرشلائزیشن ڈاکٹر اسماء تبسم نے کہا جامعہ کراچی میرین سائنسز کے شعبہ میں گراں قدر خدمت سرانجام دے رہی ہے۔ طلباء کی کاوشوں کو مزید وسعت ملے اسی لیے اس نوعیت کے سیمینارز کا انعقاد کرانا ضروری ہوگیا ہے۔

ہم مستقبل میں دیگر جامعات اور اداروں کے ساتھ ملکر کام کرنے کے خواہش مند ہیں۔
ڈائریکٹر اورک پروفیسر ڈاکٹر عالیہ رحمن نے بھی پاکستان میری ٹائم سیکیورٹی ایجنسی سے تعاون جاری رکھنے کی درخواست کی۔ اس سے طلباء کو مزید مواقع میسر آسکیں گے۔ پاکستان میری ٹائم سیکیورٹی ایجنسی کی جانب سے ڈپٹی ڈائریکٹر ٹریننگ لیفٹیننٹ تیمور بھی سیمینار میں شریک ہوئے۔
نیشنل انسٹیٹیوٹ آف اوشینوگرافی کی پی ایس او ڈاکٹر حناء سعید بیگ کا کہنا تھا کہ سمندری اور آبی حیات کا تحفظ ساحل کی صفائی سے مشروط ہے۔ کسی بھی تحقیق کے دوران ان معیارات کا خیال رکھنا بھی ہماری اولین ذمہ داری ہوگی۔آزاد جموں کشمیر سے تعلق رکھنے والے مقرر خواجہ اخلاق کا کہنا تھا کہ کائی کو کارآمد بنانے کے بارے میں زیر بحث موضوع انتہائی اہم ہے۔ سیمینار میں شعبہ نباتیات کی چیئرپرسن ڈاکٹر شہناز اور سمیت مختلف شعبہ جات سے تعلق رکھنے والے مقررین نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ شعبہ نباتیات سے تعلق رکھنے والی مقرر ڈاکٹر اقراء رشید نے بھی نباتیات جیسے اہم شعبے میں ہونے والی دلچسپ تحقیقات پر روشنی ڈالی۔
حاضرین نے موضوع کو اہم قرار دیتے ہوئے اس شعبے میں کام کو مزید تیز بنانے کے عزم کا اظہار بھی کیا۔ سیمینار کے اختتام پر شرکاء کو یادگاری شیلڈز بھی پیش کی گئیں۔
ڈائریکٹر اورک نے سیمینار میں شریک مہمانوں کو خوش آمدید کہتے ہوئے ڈاکٹر مصطفی شمیل کے لیے تعریفی کلمات ادا کیے۔ حاضرین کا شکریہ ادا کیا۔


شیئر کریں: