بھارت کے قرنطینہ سینڑ میں جونوان لڑکی جنسی ہراسگی کا شکار

شیئر کریں:

بھارت میں کورونا سے متاثرہ خواتین بھی محفوظ نہ رہیں۔
دہلی میں موجود بھارت کے سب سے بڑے قرنطینہ سینڑ میں نوجوان لڑکی جو ہراساں کیا گیا۔
کورونا وائرس میں مبتلا چودہ سالہ لڑکی کو کورونا وائرس کے دوسرے مریض نے جنسی طور پر ہراساں کیا۔

بھارت میں قرنطنیہ میں خاتون سے اجتماعی زیادتی

لڑکی کو ایک مرد ہراساں کرتا رہا اور اس کا ساتھی موبائل پر ویڈیو بناتا رہا۔
پولیس کا کہنا ہے کہ جونوان لڑکی اور دوسرے دونوں مریض کورونا وائرس
کی معمولی علامات کے باعث قرنطینہ سینڑ میں زیر علاج تھے۔

قرنطینہ میں ہوٹل عملہ کے جسمانی تعلقات سے کورونا پھیلنے کا انکشاف

دہلی میں دس ہزاد بستروں پر مشتمل دنیا کا سب سے بڑا قرنطینہ سینڑ بنایا گیا ہے۔
قرنطینہ سینڑ میں کورونا مریضوں کا علاج کیا جارہا ہے۔
اس سے پہلے بھی بھارت میں اسپتالوں اور قرنطینہ سینٹرز میں خواتین کے ساتھ زیادتی کے کئی واقعات سامنے آچکے ہیں.
اس طرح کے واقعات پرخواتین کے حقوق کی عالمی تنظیمیں بھی بھارت کو خواتین کے لیے بدترین ملک قرار دے چکی ہیں.


شیئر کریں: