بھارت نیپال میں کورونا پھیلانے لگا

شیئر کریں:

نیپال کے وزیراعظم کے پی اولی نے بھارت پر ملک میں کورونا وائرس پھیلانے کا الزام عائد کردیا ہے۔
نیپالی وزیراعظم کا کہنا ہے کہ بھارت سے نیپال میں آنے والا کورونا وائرس چین اور اٹلی کے وائرس سے زیادہ خطرناک ہے۔
وزیراعظم کے پی اولی نے کہا ہے کہ بھارتی شہری غیر قانونی طور پر سرحد عبور کر کے نیپال میں داخل ہو رہے ہیں جس سے نیپال میں کورونا وائرس پھیل رہا ہے۔

نیپال اور بھارت کے درمیان اٹھارہ سو کلومیٹر کی طویل سرحد ہے۔
دونوں ممالک کے درمیان سرحد مکمل طور پر کھلی ہے اور بغیر کسی رکاوٹ کے شہری ایک دوسرے ملک آ جا سکتے ہیں۔
ماضی میں بھارت کے زیر اثر رہنے والے نیپال کے گزشتہ چند سالوں میں بھارت کے ساتھ تعلقات خراب ہوگئے ہیں اور سرحدی معاملات پر دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی بھی پائی جارہی ہے۔

گزشتہ ہفتے بھارت کی جانب سے نیپال کے علاقے میں سٹرک بنانے کی کوشش کی گئی۔ جس کے بعد بھارتی اقدام کے خلاف نیپال کھل کر سامنے آگیا اور بھارت کو سٹرک بنانے سے روک دیا گیا۔
بھارت کے اس عمل سے دونوں ممالک میں کشیدگی مزید بڑھ گئی ہے۔

نیپال کی پارلیمنٹ نے گزشتہ ہفتے لیپولیکھ، کالا پانی اور لیپییادھورا کے علاقوں کو باقائدہ قانون سازی کے تحت اپنے سیاسی نقشے میں شامل کرلیا ہے۔
بھارت ان علاقوں کا اپنا حصہ قرار دیتا رہا ہے۔
علاقائی سیاست پر نظر رکھنے والوں کا کہنا ہے کہ بی جے پی اور آر ایس ایس کے ہندو توا کے نظریے کے باعث بھارت خطے میں تنہائی کا شکار ہوتا جارہا ہے۔

پاکستان کے بعد بھارت کی چین اور نیپال کے ساتھ حالیہ کشیدگی اس بات کی کو عیاں کر رہی ہے کہ مودی حکومت خطے کا امن تباہ کرنے میں مصروف ہیں۔


شیئر کریں: