بازار صرف نام کے سستے، مہنگائی نے ماردیا

ملک میں مہنگائی اس قدر بلند ترین سطح پر پہنچی ہے کہ اب صرف بازاروں کا نام ہی سستا بچ گیا ہے۔
ڈالر اور پیٹرول کی مسلسل اونچی اڑان اور کرایوں میں اضافے کے باعث مہنگائی ملکی تاریخ کی بلند
ترین سطح پر پہنچ گئی، اتوار، جمعہ اور سستے بازاروں میں بھی مہنگائی کا طوفان برپا ہے جس نے
عوام کی چیخیں نکال دی ہیں۔

گھریلو استعمال کی اشیاء کی قیمتوں میں 30 سے 40 فیصد اضافے کے بعد سستے بازار کی امیدیں بھی ختم
ہوگئیں۔ سفید چنا 430 روپے کلو، دال ماش 540، دال چنا 310، چاول 450، چینی 170ِ، آٹا 170 اور چکی
آٹا 175 میں فروخت ہورہا ہے۔
قیمتوں کی بات کی جائے تو اوپن مارکیٹ میں بیسن 250 روپے کلو، گھی 500 روپے، آئل 600 روپے، بیف بڑا گوشت 1100 روپے، مٹن چھوٹا گوشت 2200 روپے کلو، دودھ 220 روپے لیٹر اور دھی کی قیمت 230 روپے کلو تک جاپہنچی ہے۔
پھلوں میں سیب 200 سے 300 روپے کلو، کیلا 120 سے 150 روپے درجن، میٹھے 200 روپے درجن، آڑو 250 سے 300 روپے کلو، آم 200 سے 300 روپے کلو، خوبانی 200 سے 300 روپے کلو، امرود 150 سے 200 روپے کلو میں دستیاب ہے۔
سبزیوں کی بات کی جائے تو آلو 115 روپے کلو، پیاز 100 روپے کلو، ٹماٹر 120 روپے کلو، لہسن 600 سے 650 روپے، ادرک 1150 سے 1200 روپے کلو، سبز مرچ 80 سے 90 روپے کلو، شملہ مرچ 200 روپے، لیموں 230 روپے کلو، کھیرا 120 روپے کلو، دھنیا 100 روپے گڈی فروخت کی جارہی ہے۔
دیگر اشیائے خوردونوش کی بات کی جائے تو روٹی 30 روپے، پراٹھہ 60 روپے، چائے کا کپ 50 روپے، چکن زندہ 420 روپے، چکن گوشت 640 روپے، انڈے 298 روپے درجن فروخت ہورہے ہیں۔