ایران میں کورونا سے اموات میں اضافہ، عاشور پر ایک ہفتہ کا سخت لاک ڈاؤن

شیئر کریں:

ایران میں کورونا وائرس اموات اور مریضوں کی تعداد میں اضافہ کی وجہ سے ایک ہفتہ کا سخت
لاک ڈاؤن لگا دیا گیا ہے۔ اس دوران تمام دفاتر، بینک اور غیرضروری کاروباری سرگرمیاں بند
رہیں گی۔

وزارت صحت نے گزشتہ ماہ کہا تھا کہ صحت کا نظام بچانے کے لیے دو ہفتہ کا سخت لاک ڈاؤن کیا
جائے۔ لاک ڈاؤن کا اعلان بھی کیا گیا لیکن اس پر کسی نے عملدرآمد نہیں کیا اور اب ملک کے
تمام 31 صوبے بری طرح متاثر ہو چکے ہیں۔

محرم الحرام کی مجالس کے لیے ایس او پیز نافذ کی گئیں لیکن اس پر بھی عمل کرنے کو کوئی تیار نہیں۔
کورونا وائرس کی ٹاسک فورس کی سربراہی کرنے والے صدر ابراہیم رئیسی نے منگل سے چھ روز کا
کڑا لاک ڈاؤن کا اعلان کردیا ہے۔

ایران میں کورونا کی واپسی 2 ہفتہ کا سخت لاک ڈاؤن فوج طلب

عاشورہ کے موقع پر وائرس کے مزید پھیلنے کے پیش نظر انتہائی قدم اٹھایا گیا ہے۔ ایران میں کورونا
ویکسن لگانے کا عمل بھی سست روی کا شکار ہے۔ ایران میں روزآنہ کی بنیاد پر 300 سے زائد افراد
کی اموات ہو رہی ہے۔ ہفتہ کو 466 لوگ کورونا سے ہلاک ہوئے اور 20 ہزار 700 مریضوں کا
اضافہ ہوا ہے۔

ایران میں فروری 2020 سے کورونا وائرس کے باعث 97 ہزار اموات ہو چکی ہیں لیکن آزاد ذرائع کا
کہنا ہے کہ اموات اس سے کہیں زیادہ ہیں۔


شیئر کریں: