March 19, 2020 at 7:42 am

‎انگلینڈ کی تمام سیریز ویسٹ انڈیز منتقل ،پاکستانی میچ بھی شامل

‎عمران عثمانی

‎انگلینڈ میں کورونا وائرس کے بڑھتے اثرات کو دیکھتے ہوئے انگلش کرکٹ حکام اپنا ہوم سیزن بچانے کیلئے سر توڑ کوشش میں ہیں۔
‎شیڈول میں تبدیلی اور ایونٹس کی کٹوتی سمیت تمام ممکنہ آپشنز پر غور جاری ہے.

‎تازہ ترین پیش رفت نہایت ہی چونکا دینے والی ہے جس کے بعد ہوم آف کرکٹ کے تاریخی میدان اس بار انٹرنیشنل کرکٹ کی میزبانی سے محروم ہوسکتے ہیں.
‎اگر ایسا ہوا تو یہ اپنی جگہ ایک منفرد واقعہ ہوگا اس کے امکانات اسلئے بڑھتے جارہے ہیں کہ انگلینڈ کرکٹ بورڈ اور ویسٹ انڈیز کرکٹ میں خفیہ روابط کا انکشاف ہوا ہے جس میں انگلینڈ میں رواں سال شیڈول 2 ٹیسٹ سیریز کیریبین میدانوں میں منتقلی کی بات ہوئ ہے.
‎پہلی سیریز 4 جون سے ویسٹ انڈیز کے خلاف ہے جسے ستمبر تک ملتوی کرتے ہوئے اسے ویسٹ انڈیز میں ہی کرانے کے امکانات دیکھے گئے ہیں. اس کی میزبانی کے رائٹس انگلینڈ کو ہی حاصل ہوں گے کیونکہ یہ اس کی ہوم سیریز ہے.
‎دوسری سیریز 30 جولائی سے پاکستان کی ہے. انگلینڈ اپنی یہ سیریز بھی ویسٹ انڈیز میں کراسکتا ہے.
‎سادہ الفاظ میں یہ کہ انگلینڈ ویسٹ انڈیز اور پاکستان کے خلاف اپنی دونوں سیریز ویسٹ انڈیز منتقل کردےگا.
‎ایک تجویز یہ بھی ہے کہ پاکستان اور انگلینڈ کی سیریز ویسٹ انڈیز میں ہو اور انگلینڈ کی ویسٹ انڈیز کے خلاف جون کی سیریز ستمبر میں انگلینڈ ہی میں ہو.

‎رپورٹ کے مطابق دیگر آپشنز بھی زیر غور ہیں.
‎انگلینڈ اور یورپ کے مقابلے میں ویسٹ انڈیز تا وقت کورونا سے محفوظ ہے .وہاں اب تک 3 کیس رپورٹ ہوئے ہیں.
‎ویسٹ انڈیز کرکٹ بورڈ نے آفیشل تصدیق کی ہے کہ ہم نے انگلینڈ کو پر خلوص پیشکش کی ہے اور تمام کرکٹ کھیلنے والے ممالک کے ساتھ مشکل وقت میں تعاون کو تیار ہیں اور پورا سال کرکٹ کرواسکتے ہیں.
‎انگلینڈ آئرلینڈ کے 3 ون ڈے ستمبر میں شیڈول ہیں. اس بات کے بھی امکان ہیں کہ ایک ہی وقت انگلینڈ کے 2 اسکواڈز 2 مختلف ممالک میں ٹیسٹ اور ون ڈے سیریز کھیل رہے ہوں.
‎دوسری جانب ویسٹ انڈیز کی اپنی ہوم سیریز جولائی سے نیوزی لینڈ اور جنوبی افریقا کیخلاف ہیں جو اس صورتحال میں ری شیڈول ہوسکتی ہیں. کیریبین لیگ بھی دسمبر تک ملتوی ہوسکتی ہے.

‎بھارتی دورے سے واپسی پر پروٹیز کرکٹرز کو قید

‎ بھارت سے وطن واپس پہنچنے والی جنوبی افریقا کرکٹ ٹیم کو قید جیسی گوشہ نشینی اختیار کرنے کا حکم دیدیا گیا ہے. بھارتی دورے میں پہلا ون ڈے بارش کی نذر ہوگیا تھا جبکہ کورونا وائرس کی وجہ سے باقی 2 میچز منسوخ کردیئے گئے تھے۔
‎اس کے بعد پروٹیز ٹیم کو وطن واپسی کرنے میں ایک ہفتہ لگا.
‎جنوبی افریقی حکومت نے ایئرپورٹ سے ہی کرکٹرز کو 14 روز کیلئے سینٹر میں منتقل کیا ہے.

‎100 ملین پائونڈز کا نقصان،کرکٹ ٹیمیں بینک کرپٹ

‎انگلینڈ میں اس سال 12 اپریل سے کائونٹی کرکٹ کے آغاز کے امکانات نہ ہونے کے برابر ہیں جسکے بعد 18 کائونٹیز و انگلینڈ کرکٹ بورڈ میں ہونے والے مذاکرات میں 5 ممکنہ آپشن سامنے آئے ہیں. ان میں سے ایک آپشن ایسا بلیک ہول ہے کہ جس سے آدھی سے زیادہ کرکٹ کائونٹیز بینک کرپٹ ہوجائیں گی اور قریب 100 ملین پائونڈز کا نقصان ہوگا.

آپشنز میں 16 جولائی تک خالی میدانوں میں میچز
16 جولائی سے قبل کوئی میچ نہیں، تمام کرکٹ سیزن خالی گرائونڈز، مکمل کرکٹ سیزن منسوخی کی تجاویز ہیں.
‎مایوس کن صورتحال کا اندازہ اس امر سے بھی لگایا جاسکتا ہے کہ انگلینڈ اینڈ ویلز کرکٹ بورڈ نے سیزن کے آغا ز سے ایک ماہ قبل کلب کرکٹ پر بھی پابندی عائد کردی ہے. بدھ کی شب تک کورونا کی وجہ سے انگلینڈ میں ہلاکتوں کی تعداد 100 سے زائد ہوگئ تھی.

Facebook Comments