امریکا میں نسل پرستی بڑھ گئی 3 سیاہ فام باشندے قتل

امریکا میں نسل پرستی یا ہیٹ کرائمز میں مسلسل اضافہ دیکھنے میں آرہا ہے. ریاست فلوریڈا میں ایک سفید فام
باشندے نے دکان میں فائرنگ کر کے تین سیاہ فام باشندوں کو قتل کردیا.
حکام نے اس واقعہ کو نسل پرستی سے جوڑا ہے. چہرے پہ ماسک لگائے اور فلمی اسٹائل میں رائفل اٹھائے
20 سالہ نوجوان نے دکان میں‌ داخل ہوتے ہی گولیاں برسا دیں.
دو سیاہ فام مرد اور ایک عورت کو مارنے کے بعد سیاہ فام نوجوان نے گولی مار کے خود کو بھی ختم کرلیا.
اس سے پہلے ہفتہ کو بوسٹن میں کریبئین فیسٹیول کے دوران فائرنگ سے 7 افراد زخمی ہوئے تھے.
ایک رات پہلے بیس بال گیم کےدوران شگاکو میں فائرنگ کر کے ایک لڑکی کو ہلاک اور کئی کو زخمی
کر دیا گیا تھا.
مئی 2022 میں ایک مارکیٹ میں فائرنگ کر کے 10 سیاہ فام باشندے ہلاک کر دیے گئے تھے. امریکی
سیاست اور پالیسیوں پر نظر رکھنے والوں کاکہنا ہے کہ دنیا کے کئی ممالک کو عدم استحکام کا شکار
کرنے والے ملک امریکا کو بھی ان ہی مسائل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے.