افغان حکومت غزنی کا کنٹرول برقرار رکھنے میں ناکام طالبان کی 10ویں کامیابی

شیئر کریں:

افغانستان کے اہم صوبہ غزنی کا دارلحکومت بھی صدر اشرف غنی کے ہاتھ سے نکل گیا۔ طالبان کے مسلح
جنگجوؤں نے ملک کے دسویں صوبہ کا دارلحکومت اپنے کنٹرول میں لے لیا۔ تاہم افغان حکومت کا کہنا
ہے کہ شہر کا مکمل کنٹرول ہاتھ سے نہیں نکلا۔

صرف ایک ہفتہ کے اندر افغانستان کی صورت حال مکمل طور پر بدل چکی ہے۔ پے درپے حکومتی فوج اور
پولیس کی پسپائی سے طالبان کے حوصلے مزید بلند ہو چکے ہیں۔ اس وقت طالبان کے گڑھ ہلمند میں سب
سے بڑے شہر لشکر گاہ میں شدید لڑائی جاری ہے۔

کئی سرکاری عمارتوں میں موجود پولیس اہل کاروں نے طالبان کے سامنے اپنے ہتھیار ڈال دیے ہیں۔ دوسری
جانب حکومتی ترجمان کا کہنا ہے کہ طالبان کی تیز ہوتی پیش قدمی کے بعد پولیس اہل کاروں کی جنگی
بنیادوں پر تربیت کی جارہی ہے۔

حکومت موجودہ صورت حال سے نمٹنے کے لیے سہہ جہتی حکمت عملی ترتیب دے لی ہے۔ اب وہ طالبان
کو روکنے کے لیے بھرپور کارروائیاں کر رہے ہیں۔ اہم شاہراہوں کی نگرانی مزید کڑی کر دی گئی ہے۔ جہاں
ابھی طالبان نہیں پہنچے ان علاقوں میں مقامی افراد کے ساتھ مل کر ٹیمیں بنائی جارہی ہیں۔


شیئر کریں: