آپ کا ریٹ کیا ہے؟؟

شیئر کریں:

تحریر:فاطمہ نازش

میرا نام فاطمہ نازش سے اور میں پچھلے پانچ سال سے پاکستانی الیکڑانک میڈیا کے ساتھ بطور
ٹی وی رپورٹر کام کررہی ہوں !
صحافت کے آغاز سے پہلے میں جب بھی گھر سے باہر نکل کر کام کرنے والی خواتین کے ساتھ
ہونے والے ہراسمنٹ کے واقعات کے بارے میں سوچا کرتی تو ذہن میں یہی آتا تھا کہ بیچاریاں
نوکری بچانے کے لئے پتہ نہیں کیا کیا سہتی ہونگی ، پھر کچھ کزنز فرینڈز جو کہ مختلف شعبہ
زندگی سے تعلق رکھتی ہیں ان سے بات کرنے پر پتہ چلتا کہ کھلم کھلا تو نہیں مگر ڈھکے چھپے
الفاظ میں ان تک مختلف قسم کے پیغامات پہنچائے جاتے ہیں اور جنکا مطلب ( یقیناً ایک ہی ہوتا ہے ) خیر یہ تو تھی بات دیگر شعبہ جات کی ۔اور یہ ایک تمہید تھی میری تحریر تک پہنچنے کی ، جب میں نے میڈیا میں کام کا آغاز کیا تو بحیثیت فیلڈ رپورٹ روزانہ کئ بنیاد پر درجنوں لوگوں سے ملنے کا موقع ملتا اور یہ افراد سڑک پر ٹھیلا لگانے والوں سے لیکر وزارت کی کرسی پر بیٹھے اشرافیہ تک ہوتے ، میڈیا میں کام کرنے والوں کی ملازمت کی نوعیت ہی ایسی ہے کہ نمبرز کا تبادلہ ( خبر کےحصول ) کے لئے کرنا پڑتا ہے ! اور پھر ہوتا وہی ہے (ڈھکے چھپے پیغامات )

یہاں تک تو بات ہضم نہ ہونے کے باوجود کرنی پڑتی ہے اصل چہرے تو خود کو صاف ستھرا اور پاکیزہ ظاہر کرنے والوں کے تب نظر آنا شروع ہوئے جب تقریباً دو سال پہلے میں نےایک سوشل میڈیا پر اپنا ایک فیز بک پیج شروع کیا ، پھر کیا تھا جناب ایسی کوئی گالی جو لاہور کے بازار حسن والیوں کو کیا ہی سننے کو ملتی ہونگی وہ مجھے ملنے لگیں ! رنڈی کا لفظ تو گویا کمنٹس کا سب سے عام فہم اور سادہ لفظ ہے جو سر پر ڈوپٹہ نہ رکھنے پر ملتا ہے ، ابتدا میں سوچا کہ ایسے کمنٹس کیا میری پوسٹس پر ہیں پھر میں اپنی کچھ دیگر میڈیا فرینڈز جنکے اکاؤنٹس پبلک ہیں اور جنکا تعلق پاکستان کے تقریباً تمام علاقوں سے ہے کی پوسٹ کو چیک کرنا شروع کیا ! یقین جانئیے مجھے لگا کہ مردوں میں نوے فیصد مرد سوشل میڈیا کو خواتین کو گالیاں دیکر اپنی فرسٹریشن نکالنے لے لئے استعمال کرتے ہیں ،اور سب سے زیادہ دلچسپی ( میرا جسم میری مرضی ) جیسی پوسٹس پر جانے میں لیتے ہیں جہاں یہ تک کہا جاتا ہے کہ ان نعرے لگانے والیوں کو اپنے باپ کا پتہ نہیں اور خود بھی ایسی اولاد پیدا کرنا چاہتی ہیں تو انکا یہ شوق پورا کرنے کے لئے ہم حاضر ہیں ! یہ جملے تو ہوگئے عام خواتین کے لئے اب ذرا میں میڈیا فی میلز اور خصوصا اپنی بات کرلوں ، میں اکثر مختلف سوشل ایشوز کے لئے فیز بک لایئو آتی ہوں اور کیا آپ جانتے ہیں عورت کو سات پردوں میں موجود ہونے پر ہی عزت دار ماننے والے کیا پوچھتے ہیں ( آپکا ریٹ کیا ہے ؟)
کیا ہمارے معاشرے میں دیگر کسی بھی شعبے میں کام کرنے والی خاتون کے مقابلے میں میڈیا میں کام کرنے والی عورت سے یہ سوال پوچھنا قدرے آسان ہے ؟؟؟یہ پھر سرے سے معیوب ہی نہیں ؟؟؟؟فیصلہ آپ سب کے ہاتھ


شیئر کریں: